HAJJ GUIDE

PREVENTION IS BETTER THEN CURE

Here you will find out all you need to know about HajjOur Hajj guides are available in English, Urdu & Arabic

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

WE ARE NOW TAKING BOOKINGS FOR HAJJ 2022- LIMITED PLACES!

CONTACT US TODAY FOR NO OBLIGATION TAILOR MADE QUOTE!

  1. The pilgrimage of Hajj to Makkah (Saudi Arabia) is the fifth pillar of Islam. It needs to be performed at least once in one’s lifetime. This pillar is obligatory for every Muslim, male or female, provided that he/she is physically and financially able to do so.

    Abu Hurayrah (may Allah be pleased with him) said: “I heard the Prophet (P.B.U.H.) say: ‘Whoever does Hajj for the sake of Allah and does not have sexual relations (with his wife), commit sin, or dispute unjustly (during the Hajj), will come back like the day his mother gave birth to him.’” (Bukhaari: 1449, Muslim: 1350).

    The Hajj is the ultimate form of worship, as it involves the spirit of all the other rituals and demands great sacrifice of a believer. On this special occasion, up to 4 million Muslims from all over the world meet one another in a given year. Regardless of the time of year, pilgrims wear special clothes called the Ihram – two, very simple, unsown white garments – which strips away all distinctions of wealth, status, class and culture; all pilgrims stand together and equal before Allah (SWT).

    The rites of Hajj, which go back to the time of Prophet Abraham who built the Ka’bah, are observed over five or six days, beginning on the eighth day of the last month of the year, named Dhul-Hijjah (pilgrimage). These rites include circumambulating the Ka’bah (Tawaf), and going back and forth between the mountains of Safa and Marwah, as Hajar (Abraham’s wife) did during her search for water for her son Isma’il. Then the pilgrims stand together on the wide plain of Arafah and join in prayers asking for God’s mercy and forgiveness, in what is often thought of as a preview of the Last day of Judgment. The pilgrims also cast stones at a stone pillar (the Jamarat) which represents Satan. The pilgrimage ends with a festival, called Eid Al-Adha, which is celebrated with prayers, the sacrifice of an animal, and the exchange of greetings and gifts in Muslim communities all over the world.

The first condition before being able to go on Hajj is that it is necessary to be a Muslim. Non-Muslims are, first and foremost, obliged to become Muslims after which the daily, monthly, yearly and once in a lifetime duties of Islam become requirements upon them. Hajj is a religious duty which must be accompanied by the correct belief in order for it to be accepted by Allah (SWT).

The second and third conditions are those of sanity and puberty. A Muslim has to have reached puberty and be of sound mind for his or her Hajj to become a duty. Divine rewards and punishments are given as a result of human a choice between good and evil. Since a child or an insane person lack the ability to distinguish between good and evil, no religious duties are required of them. This principle of non-obligation is based on the following Hadith in which the Prophet (was reported to have said: “The pen is raised from (the book of deeds) of three: the sleeper until he awakes, the child until he becomes a young man, and the insane until he regains his sanity.”

However, those who help such individuals perform Hajj are rewarded for their efforts. When the Prophet (peace be upon him) was asked by a woman about her child making Hajj, he replied that the child could, but the reward would be given to her. Hence the insane individual who made Hajj while in a state of insanity is still required to make Hajj if he regains his sanity. Likewise, children who make Hajj are required to do so again when they grow up. The Prophet (peace be upon him) said, “Any child who makes Hajj then reaches puberty must make another Hajj.”

The fourth condition is that of ability based on the following Quranic verse:

And, pilgrimage to the House is duty on mankind to Allah for those who can find a way there.

[Noble Quran 3:97]

Similar statements of the Prophet (peace be upon him) define ability as being sufficient provisions and transportation. Hence, a Muslim has to be economically able to make the trip. If he has to borrow the money to make the journey, Hajj is not compulsory on him. In the case when one’s family is left in debt or with insufficient funds, it is recommended that such an individual stay home until he is financially able. Muslims with physical disabilities are also not obliged to make Hajj unless they have the economic ability to pay others to carry them. Therefore, only those who are economically and physically able to perform the testing rites of Hajj are obliged to do so.

The fifth condition is that of a Mahram, this concerns women only and could be included under the condition of ability. Since the Prophet (peace be upon him) forbade women from traveling for a distance requiring more than twenty-four hours unaccompanied by a male relative whom she cannot marry (Mahram),women are not obliged to make Hajj unless they have a Mahram to accompany them. Thus, a woman without a Mahram is recommended not to try to make Hajj. However, if the woman has the means and the Mahram, she is obliged to do so. Ayshah asked the Prophet (peace be upon him): “O, Messenger of Allah, are women obliged to make Jihad (holy war)?” he replied, “They must make Jihad in which there is no fighting – Hajj and ‘Umrah.”

There are different ways the Hajj pilgrimage to Makkah can be performed and the regulations governing its rites differ according to where the pilgrim lives or whether he intends to perform ‘Umrah along with Hajj or whether he wants to offer an animal sacrifice or not. These types of Hajj have been traditionally grouped into three categories or types of Hajj: Hajj Ifrad, Hajj Qiran and Hajj Tamattu’. By performing any one of these three methods and abiding by their regulations without doing any actions which may invalidate the Hajj, Will be sufficient to fulfill the compulsory Islamic requirement of a Hajj. The three permissible kinds of Hajj with their rules and regulations governing them are as follows:

DEFINITION

1):IFRAD

Isolated Hajj: The pilgrim performing it is called Mufrid. This type is allowed only for those living within the boundaries (Miqat) from which Ihram is put on.

2):QIRAN

Accompanied Hajj: The pilgrim performing it is called Qarin. It can only be done by those living outside the Miqat. “This concession is only for those whose homes are not near the sacred Mosque.” [Noble Quran 2:196]

3):TAMATU

Enjoyable Hajj: The pilgrim performing it is called Mutamatti’. It can only to be done by those living outside the Miqat

IHRAAM

1):IFRAD

A pilgrim is required to enter the state of Ihram with the intention of doing Hajj only.

2):QIRAN

This is Hajj combined with ‘Umrah without coming out of Ihram, The Qarin should enter the state of Ihram with the intention of performing ‘Umrah and Hajj together. The Qarin is not allowed to come out of the Ihram no matter how long the period between his ‘Umrah and Hajj may be

3):TAMATU

‘Umrah is combined with Hajj under this type; however, a new Ihram is made for the Hajj After coming out of the Ihram of ‘Umrah, the Mutamatti’ is allowed to do everything that was permitted before going into the state of Ihram.

UMRAH

1):IFRAD

If a Mufrid performs ‘Umrah during the months of Hajj (Shawwal, Dhul-Qa’dah & Dhul-Hijjah) prior to the beginning of the Hajj rites proper (8th of Dhul-Hijjah), he is no longer considered a Mufrid. He must now shift to one of the other two types of Hajj combine ‘Umrah along with them and their regulations must instead be followed

2):QIRAN

For Hajj Qiran, the ‘Umrah has to be done within the months of Hajj (Shawwal, Dhul-Qa’dah & the first ten days of Dhul-Hijjah) and completed before beginning the rites of Hajj

3):TAMATU

The ‘Umrah has to be within the months of Hajj and must be completed before beginning the rites of Hajj. After completing ‘Umrah, the pilgrim making Hajj Tamattu’ must come out of his or her state of Ihram.

TAWAF

1):IFRAD

When he reaches Mecca, he performs Tawaf for his arrival and Sa’i for Hajj known as Tawaf al Qudum (the arrival circuit). It is permissible for him to postpone his Sa’i for Hajj until after his Tawaf for Hajj.

2):QIRAN

When he reaches Mecca, he performs Tawaf for his arrival and Sa’i for Hajj

3):TAMATU

The Tawaf made for ‘Umrah takes the place of the arrival Tawaf (Tawaf al-Qudum). This is then followed by 2 Rak’as Salah near to Ibrahim’s station (In case of heavy traffic he may do the Salah anywhere in the general area to avoid causing problems with those making their Tawaf).

TAHALLUL

1):IFRAD

No shaving or clipping hair, as he doesn’t disengage from Ihram. Instead, he remains in Ihram till after he stones Jamrah Al-Aqabah on the Eid day

2):QIRAN

The Qarin should clip his hair after ‘Umrah instead of shaving it

3):TAMATU

The Mutamatti’ should clip his hair instead of shaving it to come out of his state of Ihram after completing the ‘Umrah part of his pilgrimage.

SACRIFICE

1):IFRAD

May offer an animal sacrifice if he wants to, but he is under no obligation to do so.

2):QIRAN

Must offer an animal sacrifice which he brought along with him from the boundaries known as the Miqat.

3):TAMATU

Must offer an animal sacrifice, but if he is unable to do so, he is required to fast for ten days according to Allah’s statement: “But if someone cannot afford a sacrifice, he can fast three days during Hajj and seven row days after returning home. That is ten days in all.” [Noble Quran 2:196]

روى مسلم في صحيحه عن ابْنَ عُمَرَ أَنّ رَسُولَ اللّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ إِذَا اسْتَوَىَ عَلَىَ بَعِيرِهِ خَارِجاً إِلَىَ سَفَرٍ، كَبّرَ ثَلاَثاً، ثُمّ قَالَ: سُبْحَانَ الّذِي سَخّرَ لَنَا هَذَا وَمَا كُنّا لَهُ مُقْرِنِينَ* وَإِنّا إِلَىَ رَبّنَا لَمُنْقَلِبُونَ. اللّهُمّ إِنّا نَسْأَلُكَ فِي سَفَرِنَا هَذَا الْبِرّ وَالتّقْوَىَ. وَمِنَ الْعَمَلِ مَا تَرْضَىَ. اللّهُمّ هَوّنْ عَلَيْنَا سَفَرَنَا هَذَا. وَاطْوِ عَنّا بُعْدَهُ. اللّهُمّ أَنْتَ الصّاحِبُ فِي السّفَرِ. وَالْخَلِيفَةُ فِي الأَهْلِ. اللّهُمّ إِنّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ وَعْثَاءِ السّفَرِ، وَكَآبَةِ الْمَنْظَرِ، وَسُوءِ الْمُنْقَلَبِ، فِي الْمَالِ وَالأَهْلِ”. وَإِذَا رَجَعَ قَالَهُنّ. وَزَادَ فِيهِنّ: “آيِبُونَ، تَائِبُونَ، عَابِدُونَ، لِرَبّنَا حَامِدُونَ”

Allahu Akbar, Allahu Akbar, Allahu Akbar, Subhanal-ladhi sakhkharalanahadha wa ma kunna lahumuqrinin. Wa “inna “ila Rabbina la-munqalibun. Allahumma “inna nas’aluka fi safarina hadhal-birrawat-taqwa, wa-minal-‘amalima tarda,  Allahummahawwin ‘alayna safarana hadha watwi ‘anna bu’dahu, Allahumma “Antas-sahibufis-safari, wal-khalifatufil-“ahli, Allahumma “inni “a’udhubika min wa’tha”is-safari, waka’abanl-manzari, wasu”il-munqalabifil-maliwal”ahli.

Allah is the Most Great. Allah is the Most Great. Allah is the Most Great. Glory is to Him Who has provided this for us though we could never have had it by our efforts. Surely, unto our Lord we are returning. O Allah, we ask You on this our journey for goodness and piety, and for works that are pleasing to You . O Allah , lighten this journey for us and make its distance easy for us . O Allah, You are our Companion on the road and the One in Whose care we leave our family . O Allah , I seek refuge in You from this journey’s hardships, and from the wicked sights in store and from finding our family and property in misfortune upon returning.

1 – When a person has intention to travel, it is mustahabb for him to consult with somone whose religious commitment, experience, knowledge and someone he trusts about travelling during that time. The one who is consulted must be sincere in offering advice and avoid being influenced by their own whims and desires. Allah (swt) says : “and consult them in the affairs” [Aal ‘Imraan 3:159] The saheeh ahaadeeth tells us that the people used to consult the Prophet (peace and blessings of Allah be upon him) with regard to their affairs.

2 – Once he has made a decision to travel, the Sunnah is to seek Allah’s guidance by praying istikhaarah. To perform istikhaarah you should pray two rak’ahs of non-obligatory prayer, then recite the du’aa’ of istikhaarah.

3 – If a person has decided to travel for Hajj or Umrah or any other purpose, he should start by repenting from all sins and makrooh actions, and he should put right any wrongs he has done towards people and pay off whatever he can of the debts he owes them; he should also return anything that has been entrusted to him and seek forgiveness from anyone with whom he has any dealings or friendship. He should also write his will and have it witnessed, and should appoint someone to pay off any debts that he was not able to pay. He should also leave funds with his family and those on whom he is responsible for to spend and should be enough to cover their needs until he returns.

4 – He should seek to please his parents and those whom he is obliged to honor and obey.

5 – If a person is travelling for Hajj or jihad or any other purpose, he should make all efforts to ensure that his funds are halal and free from any suspicion. If he goes against this and goes for Hajj or jihad with wealth that has been seized by force, he is a sinner and although his Hajj or jihad may be outwardly valid, it will not be a proper Hajj (Hajj mabroor).

6 – It is mustahabb for a person who is travelling to Hajj or for any other reason for which provision is carried to take a great deal of provision and money with him, so that he can share them with those who are in need on his travels. His provisions should be good (i.e., halal), because Allah (swt) says : “O you who believe! Spend of the good things which you have (legally) earned, and of that which We have produced from the earth for you, and do not aim at that which is bad to spend from it” [al-Baqarah 2:267] A person should give willingly so that it will more likely be accepted.

7 – If a person wants to travel for Hajj or jihad, he should learn about how they are to be performed, for no act of worship is valid if done by one who does not know how it is done properly. It is mustahabb for the one who wants to do Hajj to take with him a clear book about the rituals which also speaks about their aims, and he should read it constantly and often during his journey, so that it will become fixed in his mind. Hence there is the fear that for some of the common folk, their Hajj will not be valid because they may unknowingly fail to fulfil one of the conditions and so on. And some of them may imitate some of the common folk of Makkah, thinking that they know the rituals properly and thus being deceived by someone doing acts incorrectly. This is a serious mistake. Similarly in the case of one who is going out for jihad etc, it is recommended for him to take a book which speaks of what he needs to know, and the warrior should learn what he needs to know about fighting and the du’aa’s to be said at that time, and the prohibitions on treachery, killing women and children, and so on. The one who is travelling for the purpose of trade should learn what he needs to know about buying and selling, which transactions are valid and which are invalid, what is halal and when dealing with others.

8 – It is mustahabb for a person to seek a companion who desires good and hates evil, so that if he forgets, he can remind him, if he remembers, he can help him, and if he happens to be a man of knowledge, he should stick with him, because he will help him to avoid bad attitudes such as boredom with travel and he can help him to maintain a noble attitude and encourage him to do so. He should also be keen to please his companion throughout the journey. Each of them should put up with each other and view his companion with respect and be patient with whatever he may do.

9 – It is mustahabb for a person to bid farewell to his family, neighbors, friends and all his loved ones. He should bid farewell to them and he should say to each of them: “I place your religion, your faithfulness and the ends of your deeds in the trust of Allah.” The one who is staying behind should say to the traveller: “May Allah (swt) bless you with taqwa and forgive you your sins and make goodness easy for you wherever you are.”

10 – It is a Sunnah to say the following du’aa’ when leaving the house: Bismillaah, tawakkaltu ‘ala Allaah, wa laa hawla wa laa quwwata illa Billaah. Allaahumma inni a’oodhu bika min an adilla aw udalla aw azilla aw uzalla aw azlima aw uzlama aw ajhala aw yujhal ‘alayya (In the name of Allaah, I put my trust in Allah and there is no power and no strength except with Allaah. O Allaah, I seek refuge with You lest I should stray or be led astray, or slip or be tripped, or do wrong or be wronged, or behave foolishly or be treated foolishly).”

11 – The Sunnah when leaving one’s house and wanting to get up on one’s mount is to say Bismillah. Then when he has mounted it he should say: “Al-hamdu Lillaah illadhi sakhkhara lana hadha wa ma kunna lahu muqrineen wa inna ila rabbina la munqaliboon (In the name of Allaah… All praise be to Allaah Who has placed this (transport) at our service and we ourselves would not have been capable of that, and to our Lord is our final destiny.” Then he should say Al-hamdu Lillaah (praise be to Allaah) three times and Allaahu akbar (Allaah is most Great) three times, then, “Subhaanaka inni zalamtu nafsi faghfir li innahu la yaghfir ul-dhunooba illa anta (Glory be to You, verily I have wronged myself, so forgive me, for surely no one can forgive sins except You).”  And: “Allaahumma inna nas’aluka fi safarina haadha al-birra wa’l-taqwa wa min al-‘aml ma tarda, Allaahumma hawwin ‘alayna safarana haadha watwi ‘anna bu’dahu. Allaahumma anta al-saahib fi’l-safar wa’l-khaleefah fi’l-ahl. Allaahumma inni a’oodhu bika min wa’tha’ al-safar wa ka’aabat al-manzar wa su’ al-munqalib fi’l-maali wa’l-ahl (O Allaah, we ask You for righteousness and piety in this journey of ours, and we ask You for deeds which please You. O Allaah, facilitate our journey and let us cover its distance quickly. O Allaah, You are the Companion on the journey and the Successor (the One Who guards them in a person’s absence) over the family. O Allaah, I seek refuge with You from the difficulties of travel, from having a change of heart and from being in a bad predicament, and I seek refuge with You from an ill-fated outcome with regard to wealth and family).” When returning the same words are recited with the following addition: “Aayiboona taa’iboona ‘aabidoona li rabbina haamidoon (Returning, repenting, worshipping and praising our Lord).” 

12 – It is mustahabb to if possible travel with a group of people, because of the hadeeth of ‘Umar (may Allaah be pleased with him) who said: The Messenger of Allah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “If the people knew what I know about being alone, no one would ever travel alone at night.” Narrated by al-Bukhaari.

13 – It is mustahabb for the group to appoint the best and wisest of their group as their leader, and to obey him, because of the hadeeth of Abu Sa’eed and Abu Hurayrah who said: The Messenger of Allah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “When three people set out on a journey, let them appoint one of their number as their leader.” A hasan hadeeth narrated by Abu Dawood with a hasan isnaad.

14 – It is mustahabb to set out at the end of the night, because of the hadeeth of Anas who said: The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “You should travel at the end of the night (or throughout the night) because it is easier to cover a greater distance at night.” This was narrated by Abu Dawood with a hasan hadeeth. It was also narrated by al-Haakim who said: it is saheeh according to the conditions of al-Bukhaari and Muslim.  

15 – He should have a kind, good attitude; try to avoid arguing, avoid pushing and shoving people on the road. He should guard his tongue against insults, backbiting, cursing or any other kind of foul speech.

16 – It is mustahabb for the traveller to say takbeer when going up a rise in the land and to say tasbeeh when going down into valleys and the like.

17 – If a person sees a village or town that he wants to enter, it is mustahabb for him to say: “Allaahumma as’aluka khayraha wa khayra ahliha wa khayra ma fiha wa ‘a’oodhu bika min sharriha wa sharri ahliha wa sharri ma fiha (O Allaah, I ask You for its goodness, the goodness of its people and the goodness of what is in it, and I seek refuge with You from its evil, the evil of its people and the evil of what is in it).”

18 – It is mustahabb for a person to make du’aa’ most of the time when travelling, because his du’aa’ will be answered.

19 – He should always try to remain in a state of purity and to pray on time. Allah has made it easy by allowing tayammum and joining and shortening of prayers for a traveler.

20 – The Sunnah when stopping in a place is to say what was narrated by Khawlah bint Hakeem, who said: I heard the Messenger of Allah (peace and blessings of Allaah be upon him) say: “Whoever makes a stop then says: ‘A’oodhu bi kalimaat Allaah il-taammati min sharri ma khalaq (I seek refuge in the perfect words of Allaah from the evil of that which He has created),’ nothing will harm him until he moves on from that place.” Narrated by Muslim.

21 – It is mustahabb for a travelling group to camp close to one another and not to be distanced or separated needlessly, because of the hadeeth of Abu Tha’labah al-Khushani (may Allaah be pleased with him) who said: When the people stopped in a place, they would scatter in the mountain passes and valleys. The Messenger of Allah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Your scattering in these mountain passes and valleys is something from the Shaytaan.” After that, they never stopped in any place without being close together. Narrated by Abu Dawood with a hasan isnaad.

22 – The Sunnah for the traveller is that when he has done what he set out to do, he should hasten to return to his family, because of the hadeeth of Abu Hurayrah, according to which the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Travel is a kind of torment, which keeps one of you from his food and drink. When one of you has finished what he set out to do, let him hasten back to his family.” Narrated by al-Bukhaari and Muslim. 

23 – The Sunnah is to say when returning from a journey that which is narrated in the hadeeth of Ibn ‘Umar, according to which the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him), when he came back from a campaign or from Hajj and ‘Umrah, he would say takbeer on every high ground three times, then he would say, ‘Laa ilaaha ill-Allaah wahdahu laa shareeka lah, lahu’l-mulk wa lahu’l-hamd wa huwa ‘ala kulli shay’in qadeer. Aayiboona taa’iboona ‘aabidoona, saajidoona li rabbina haamidoon. Sadaqa Allaahu wa’dah wa nasara ‘abdah wa hazama al-ahzaaba wahdah (There is no god but Allaah alone, with no partner or associate. His is the Dominion, to Him be all praise, and He is Able to do all things. Returning, repenting, worshipping, prostrating to our Lord and praising Him. Allaah fulfilled His promise, granted victory to His slave and defeated the confederates Alone). Narrated by al-Bukhaari and Muslim.  It was narrated that Anas said: We came back with the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), and when we reached the outskirts of Madinah he said: “Aayiboona taa’iboona ‘aabidoona li rabbina haamidoon (Returning, repenting, worshipping and praising our Lord).” And he kept saying that until we came to Madinah. Narrated by Muslim. 

24 – The Sunnah when returning home is to firstly go to the mosque that is nearest his home and praying two rak’ahs with the intention of offering salaat al-qudoom (the prayer of arrival), because of the hadeeth of Ka’b ibn Maalik, according to which the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), when he came back from a journey, would start by going to the mosque where he would pray two rak’ahs and then sit down. Narrated by al-Bukhaari and Muslim.

25 – It is mustahabb to make food for the returning traveller, whether it is made by the traveller himself or by someone else for him, as indicated by the hadeeth of Jaabir (may Allaah be pleased with him), according to which the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him), when he came back to Madinah from a journey, would slaughter a camel or a cow. Narrated by al-Bukhaari. 

It is haram for a woman to travel without a mahram unnecessarily, whether that is a long or a short distance, because of the hadeeth of Abu Hurayrah (may Allaah be pleased with him) who said: The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “It is not permissible for a woman who believes in Allah and the Last Day to travel for the distance of one day and one night except with a mahram.” Narrated by al-Bukhaari and Muslim.

Shaykh Ibn ‘Uthaymeen (may Allaah have mercy on him) said:

The etiquette of travelling for Hajj is divided into two categories: obligatory and mustahabb. The obligatory etiquette means that the traveller should fulfil all the obligations and pillars (essential parts) of Hajj, and avoid the things that are forbidden in ihraam in particular, and the things that are forbidden in general, whether they are forbidden in ihraam or when not in ihraam, because Allaah says (interpretation of the meaning):

“The Hajj (pilgrimage) is (in) the well-known (lunar year) months (i.e. the 10th month, the 11th month and the first ten days of the 12th month of the Islamic calendar, i.e. two months and ten days). So whosoever intends to perform Hajj therein (by assuming Ihraam), then he should not have sexual relations (with his wife), nor commit sin, nor dispute unjustly during the Hajj” [al-Baqarah 2:197]

The mustahabb etiquette when travelling for Hajj is for a person to do all the things that he should do, such as being generous to people, serving his brothers, putting up with their annoyance, not retaliating to mistreatment, and being kind to them, whether that is after he puts on the ihraam or before, because this etiquette is sublime and good, and is required of every believer at all times and in all places. There are also other points of etiquette that has to do with the act of worship, such as doing Hajj in the most perfect manner and striving to do it with the proper etiquette in both world and deen.

Meeqat is an Arabic word; it literally means “a confirmed place”. It is a place beyond which no Muslim who is intending to perform Hajj or ‘Umrah can go towards Makkah without being in a state of Ihram

Meeqat sets the boundaries of the Haram from all directions approaching Makkah. Upon crossing the Meeqat a person should consider it binding upon himself to respect any rules that may apply to him, as he should consider himself having entered the haram upon crossing the Meeqat.

Proceeding in Ihram at the time of crossing the Meeqat is one of the rules binding upon those who enter the haram with the intention of Hajj or Umrah

The Meeqats (places for assuming Ihram) are five: DhulHulaifah, Al-Juhfah, Qarn-ulmanaazil, Yalamlam and DhaatuIrq. They are for those who live there and those who pass by them intending Hajj or ‘Umrah. And he whose house is nearer than them to Makkah then he makes Ihram from his house, the people of Makkah making Ihram from Makkah.

Dhul Hulaifah-is the place for the people of Madinah and is a village six or seven miles away – and it is the furthest Meeqat from Makkah -. This miqat is about 9 kilometers from Madinah and about 450 kilometers from Makkah. This miqat is now known as ABIYAR ALI

Al-juhfah- is a village between Madinah and Makkah – about three travel stages away. It is the meeqat for the people of Madinah if they come by this route. IbnTaimiyyah said: “It is the Meeqat for those who make Hajj from the direction of the west, like the people of Shaam (Greater Syria) and Egypt and the rest of the West. And it is today ruined and deserted; therefore the people now go into Ihram before it in the place called “Raabigh”. This miqat is about 190 kilometers to the northwest of Makkah.

Qarn Ul Manaaaio – which is also called “Qarn-uth-Tha’aalib” is near Makkah – being a day and night’s journey away – and is the Meeqat for the people of Najd. This miqat is a hilly place about 90 kilometers to the east of Makkah.

YALAMLAM- is a place two nights distant from Makkah, thirty miles away and is the Meeqat for the people of Yemen. This miqat is a hilly area about 50 kilometers to the southeast ofMakkah. This is the miqat for the people of Yemen and others coming from that direction. It is the miqat for many of the pilgrims from China, Japan, India, Pakistan who come by ship.

DHAATU IRQ- is a place out in the desert, marking the border between Najd and Tihaamah, being forty-two miles from Makkah. It is the Meeqat for the people of Iraq. This miqat is about 85 kilometers towards the northeast side of Makkah. This is the miqat for the people of Iran, Iraq and for those coming from that direction.

IHRAAM

The literal meaning of Ihram is to make haram (forbidden). When a haji pronounces the Niyyah (intention) of Hajj and Umrah and utters Talbiyah, certain halal (permissible) things become haram for him. These actions together (Niyyah and Talbiyah) are called Ihram. The two sheets that a haji wears are figuratively known as Ihram but the real Ihram is the Niyyah & Talbiyah. If someone wears these two sheets and does not declare his intention and utter Talbiyah, he does not become a Muhrim. That is why, before Niyyah and Talbiyah, he can cover his head during two rakahs of Nafl, an act which is not allowed in the real state of Ihram.

PROHIBITIONS OF IHRAAM

After making intention and Talbiyah, you are in the state of Ihram and from this time on you should not do acts that are forbidden in an Ihram state, for example, here are some of the things a muhrim must not do:

Cover head (men), cover face (women)

Cover the middle bone of the upper part of the feet (Both men and women)

Shave / cut hair

Cut nails

Wear perfume

Wear stitched clothing (men) / (Women can wear their ordinay clothes)

Hunting / killing

Sex.

PROCEEDURE

Preparing to be in the state Ihram, Comb your hair, shape the beard, trim your mustache, cut your nails, and remove unwanted body hair.

Purification. You should take a bath with the intention of Ihram otherwise do wudu. Here it is noted that there are two ways of purification:

Purification of the body, shower or wudu.

Internal purification, sincere repentance on your sins. Say something like this: “O Allah, I sincerely repent on my sins and seek your forgiveness.”

Ihram Sheets. Men should wear a sheet of white cloth around the waist and cover the upper body with the other sheet. Women’s ordinary clothes are their Ihram. Both should wear the flip-flops (hawai chappal) so that the middle bones of the upper part of the feet are not covered.

Nafl Salah. If it is not makruh (undesirable) time, offer two rakahs of nafl for Ihram by covering your heads.

Advice. If going to Jeddah by airplane, it is convenient to get into the status of Ihram inside the plane. Here are the steps you should follow to do this. Do everything at home or at the airport except Niyyah (intention) and Talbiyah. Have your shower, pray two rakahs of nafl but you are still not in the status of ihram because you haven’t done the main thing yet, i.e., intention and Talbiyah which are done at or before the boundary line called the Miqat.

Go to the airplane and sit down with the white sheets on. In a Hajj flight when you are close to the Miqat, the pilot will announce that this is the border line to make your intention and to say Talbiyah. Those who did not change their clothes before should do so now although it is not convenient inside the plane.

Please note that:

It is a good idea to ask at the time of boarding if the arrival of Miqat will be announced by the pilot. If not, make your intention and say Talbiyah on your own approximately one hour before you reach Jeddah.

If you are flying with a group, follow the instructions of the group leader.

Intention and Talbiyah. Now uncover your head and declare your intention. It is assumed that you are performing Hajj al-Tammat’u in which Umrah is performed first as described later in the “Kinds of Hajj”.

O Allah! I intend to perform Umrah. Please make it easy for me and accept it from me. Amen.”

Immediately after that, utter the words of Talbiyah three times and as often as possible. If you don’t remember it, you can say its translation in English or in any other language but Talbiah or its translation is pronounced in a loud voice by men and in a subdued voice by women.

TALBIYAH

TALBIYAH after ihram

“Labbayk,( Here we come,

Allahumma Labbayk.O Allah, here we come !

Labbayk.Here we come.

La shareeka laka.No partner have You.

Labbayk.Here we come!

Innal-hamda wan-n’imataPraise indeed, and blessings, are Yours—

laka wal-mulk.the Kingdom too!

La shareeka lak.”No partner have You!)

Journey towards Makkah. When this sacred journey towards Makkah al-Mukarrama starts, recite Talbiyah frequently on the way. Then enter the city very humbly and with great fondness still reciting Talbiyah.

After arranging and settling at your residence, proceed to the Haram Sharif to perform Umrah.

Make Intention

Wear Ihram

Dua at the first sight of kabba

Complete tawaf (7 circuits of kabba)

Read 2 rakat at mukaam e ibrahim

Drink zamzam

Do Saee (7 times from safa to marwa is counted as one)

Make dua

Finally men shave hair/cut hair from all roud the head an women to cut hair 1/4 of length of finger

Hajj Preparations

On the date of 8th DHULHIJA preparations start after the Maghrib prayer of the 7th of DHULHIJA. All Hajj preparations must be completed during these night hours.

Preparations for Ihraam

Comb your hair, shape the beard, trim your mustache, cut your nails, and remove unwanted body hair.

Bath

Take a bath with the intention of Ihram or otherwise do wudu.

Ihraam

Men should wear a sheet of white cloth around the waist and cover the upper body with the other sheet. Women’s ordinary clothes are their Ihram. Both should wear flip-flops so that the middle bones of the upper part of the feet are not covered.

Nafl Salah

If it is not a makruh (undesirable) time offer two rakahs of nafl for Ihram

Intention and Talbiyah

Declare your intention saying: “O Allah! I intend to perform Hajj. Please make it easy for me and accept it from me. Amen.” Immediately after this utter the words of Talbiyah three times and as often as possible after that. Men should say the Talbiyah in a loud voice but women should say it in a subdued tone.

Prohibitions of Ihram

From this time the prohibitions of Ihram start. Remember their details and follow the rules. From this point on men cannot cover their heads for the duration of being in Ihram.

Departure to Mina

After sunrise proceed towards Mina. On the way, pronounce Talbiyah as often as you can and also utter other supplications. But it is ok to follow the procedure of your Mu’allim who usually arranges for hajis to leave for Mina during the night after Isha prayers.

In Mina

In Mina offer Zuhar, Asr, Maghrib and Isha prayers. Spend that night in Mina and on 9 DHULHIJA, if you already have not left for Arafat offer Fajr prayer there.

Departure for Arafat

Pilgrims should perform Fajr prayer and say Takbir Tashriq (Allah-u Akbar, Allah-u Akbar La Ilaha ill-Allah wa-Allah-u Akbar, Allah-u Akbar wa Lillah-il-hamd) and Talbiyah. Be prepared to reach Arafat by zawal (declining of the sun).

Waquf-e-Arafat

Waquf begins at the start of zawal (declining of the sun) and ends at the sunset. You should spend this time uttering Talbiyah, repenting your sins, seek forgiveness and the mercy of Allah, say Darud Sharif and utter all the supplications (du’as) in Arabic and in your own language. It is better to do Waquf while standing but sitting down is also permitted.

Zuhr and Asr Prayers

In Masjid-e-Namrah, the imam leads Zuhr and Asr prayers, combined and shortened, at Zuhr time with one adhan but separate iqamahs. At other places in Arafat, some people similarly combine these two salats. But it is advisable that away from Masjid-e-Namrah, offer them at their proper times with jama’at as recommended by the most scholars.

Departure for Muzdalifah

At the time of sunset in Arafat, proceed to Muzdalifah without offering Maghrib prayer reciting Zikr and Talbiyah on the way.

Maghrib and Isha Prayers

In Muzdalifah offer Maghrib and Isha prayers together at Isha time. For both prayers there is one adhan and one iqamah.

  • First offer Fard prayer of Maghrib with jama’at. Then say Takbir Tashriq and Talbiyah.
  • Immediately after that offer Fard prayer of Isha with jama’at.
  • Offering Nafl prayer is optional.

Zikr and Du’a

This is a very blessed night in which to glorify Allah, recite Darud Sharif, read Quran, utter Talbiyah and supplicate very humbly. Also take some rest.

Pebbles

Pick up forty-nine pebbles of the size of big grams (chick peas) if Rami is to be performed for three days and seventy if for four days.

Fajr Prayer and Waquf

At Fajr time after two rakah Sunnah, offer Fard prayer with jama’at. Then perform waquf.

Return to Mina

Proceed to Mina when the sun is about to rise or When directed by molim & group leader.

Rami of Jamrah Aqabah

In Mina, stone Jamrah Aqabah with seven pebbles one after the other. Due to the risk to life, the old, weak or sick persons can perform Rami a little before sunset or at night.

Stop Talbiyah

Stop saying Talbiyah when you throw the first pebble. Also don’t stop for du’a. Just go to your residence and do Qurbani (animal sacrifice).

Qurbani (Animal Sacrifice)

Three days are designated for Qurbani, i.e., 10, 11 or 12 Zil Hijjah. Qurbani can be done any time during the day or night. It is usually easier to sacrifice an animal on the 11 Zil Hijjah. Do qurbani yourself or ask a trusted person to do it for you.

Halq or Qasr

After Qurbani men should preferably get their whole head shaved (Halq) but it is permissible to cut the hair (Qasr) of their whole head equal in length to a joint of a finger (about an inch). It is also permissible to cut the hair (about an inch) of one fourth of the head. A woman is prohibited to shave her head. She can cut about an inch length of hair of one fourth of her head. But according to some scholars it is sufficient for a woman to have a lock of her hair cut off.

  • If the sacrifice is postponed till the next two days, Halq or Qasr is also postponed because it comes after the sacrifice.
  • Halq or Qasr can be done at any time up to the 12 of Zil Hijjah even if the sacrifice is not postponed. After Halq or Qasr all prohibitions of Ihram are lifted except the private relations between husband and wife which are permissible after Tawaf-e-Ziarah.
  • Halq or Qasr in Mina is a Sunnah. But you are allowed to do it anywhere in Haram. If done outside the precincts of Haram, it requires a Dam.
  • You have to make sure that Rami, sacrifice and shaving or clipping of the hair are performed in the order in which they are listed otherwise a Dam is required as a penalty.

Tawaf-e-Ziarat

Now perform Tawaf-e-Ziarat. It can be done any time, day or night, from 10 Zil Hijjah to the sunset of 12 Zil Hijjah. Usually it is convenient to do it on 11 Zil Hijjah. Its procedure is similar to that of Tawaf of Umrah and it is essential that you have performed wudu. According to Sunnah this tawaf is to be performed after Rami, sacrifice and shaving or clipping of the hair, and every effort should be made to do that, but the Fard stands even if Tawaf-e-Ziarat is performed prior to all these practices. As mentioned earlier, Halq or Qasr after Qurbani lifts all the prohibitions of Ihram but the private relations between man and wife are permitted only after this Tawaf.

Sa’ee of Hajj

After this perform Sa’ee. Its procedure is the same as that of Sa’ee of Umrah. It is a Sunnah to make sure that your wudu is intactn

Return to Mina

Return back to Mina when Sa’ee is completed and spend the night there.

Rami of Jamrarat

Throw seven pebbles on each of three Jamarat after zawal (decline of the sun). Rami is usually easy to perform a little before sunset and at night. And it is permissible to do Rami at night if there is a risk to life.

Supplicate

Throw seven pebbles at Jamrah Oolah. Then move a little forward. And with your hands raised and facing Qibla, praise Allah (SWT) and recite Arabic du’as or supplicate in your own words. There are no prescribed du’as.

Supplicate

After this throw seven pebbles at Jamrah Wustah. Here too trying to face the Qiblah, praise Allah and earnestly seek his mercy, forgiveness and blessings. No particular du’a is prescribed here.

Do not supplicate

Then throw seven pebbles at Jamrah Aqabah. But this time do not supplicate at all, after Rami just return to your place.

Second chance for Tawaf of Ziarah

If you were unable to do Tawaf-e-Ziarah yesterday, do it today and return to Mina for overnight stay.

Zikr and Ibadah

When at your residence, recite Quran, glorify Allah, repent for your sins and seek forgiveness. Ask Allah(SWT) for whatever you want and don’t commit any sins.

Rami of Jamrarat

Throw seven pebbles at each of three Jamarat after zawal (decline of the sun). Rami is usually easier a little before sunset and at night. And it is permissible to do Rami at night if there is a risk to life.

Supplicate

Throw seven pebbles at Jamrah Oolah. Then move a little forward. And with your hands raised and facing Qibla, praise Allah and recite Arabic du’as or supplicate in your own words. There are no prescribed du’as.

Supplicate

After this throw seven pebbles at Jamrah Wustah. And facing the Qiblah, glorify Allah, recite Darud Sharif and supplicate earnestly for whatever you desire. There is no du’a prescribed for this occasion.

Do not supplicate

Then throw seven pebbles at Jamrah Aqabah and come back to your residence without any du’a.

Last chance for Tawaf of Ziarah

If you were unable to do Tawaf-e-Ziarah earlier, it is a must to complete it today before Maghrib.

Tawaf-e-Wida

After Hajj, when you intend to return back to your country from Makkah, it is Wajib (obligatory) to perform Tawaf-e-Wida (Farewell Tawaf). Its procedure is the same as that of a Nafl Tawaf.

Masjid al-Haram was built around the Kaaba and is the largest mosque in the world. It was first built under the leadership of the Caliph Omar Ibn al-Khattab (634-644) and has been developed continuously under several Muslim rulers. Omar, the first Caliph, ordered the demolition of some houses surrounding the Kaaba in order to accommodate the growing number of pilgrims and built a 1.5 meter high wall to delineate a large prayer area. -During the reign of his successor Caliph Uthman Ibn Affan (644-656), the prayer space was made bigger and was covered with a roof carried on wooden columns and arches. In 692, after Caliph Abdul Malik bin Marwan conquered Mecca from Ibn Zubayr, the guardian of the holy site, the outer walls of the mosque were raised, the ceiling was covered with teak and the column capitals were painted in gold. His son, al-Walid (705-715), contributed to the Mosque of al-Haram by replacing the wooden columns with marble ones and by decorating its arches with mosaics. Later, Abbasid Caliph Abu Ja’far al-Mansur (754-775) added mosaics to the columns. He also doubled the size of the northern and western wings of the prayer hall and erected the minaret of Bab al-Umra on the northwest corner. In 777, due to the growing number of pilgrims, Abbasid Caliph al-Mahdi (775-785) ordered the rebuilding of the mosque, demolishing more houses around the Ka’ba. The new mosque enclosure centered on the Kaaba, measured 196 meters by 142 meters. It was built on a grid plan, with marble columns imported from Egypt and Syria, decorated with gilt teak wooden inlay. Al-Mahdi also built three minarets crowned with crenellations and they are placed above Bab al-Salam, Bab Ali and Bab al-Wadi of the mosque.

Kabba

The first Kaaba was constructed by Prophet Ibrahim (peace be upon him) and his son Ismail as a house of worship to the one true God. Allah (the Glorified and Exalted) says in the Quran that this was the first house that was built for humanity to worship Allah (the Glorified and Exalted). Soon after Prophet Ibrahim (peace be upon him) died, people started filling the Kaaba with idols. It was not until Prophet Muhammad (may the blessings and peace of Allah be upon him) defeated the idol-worshippers that the idols inside the Kaaba were destroyed.

Muslims around the world face the direction of the Kaaba during prayers, no matter where they are. This is called facing the Qiblah.

As mentioned in this verse in the Quran, “Verily, We have seen the turning of your (Muhammad’s) face towards the heaven. Surely, We shall turn you to a Qiblah (prayer direction) that shall please you, so turn your face in the direction of Masjid al-Haram. And wheresoever you people are, turn your faces (in prayer) in that direction.” [2:144]

Maqam e Ibrahim

Located near the Holy Kaaba, Maqam Ibrahim is a highly sacred place for the Muslims of all over the world. This Holy place has a unique historical significance because of its relation with the construction of Holy kaaba, the house of Almighty Allah. Muslims from all over the world visit this place while performing the Holy Pilgrimage of kaaba, offer prayers and seek forgiveness of Almighty Allah.

History of Maqam e Ibrahim

The Prophet Ibrahim (May Peace Be Up on Him) stood on this large block stone while he was constructing the Holy Kaaba. Islamic tradition says it was sent from the heavens, the stone used to move around, up and down as per the instructions of Prophet Ibrahim (May peace Be Upon Him), helping the Prophet of Allah to build the walls of Kaaba with the assistance of his son Prophet Ismail (May Peace Be Up on Him). After the completion of Kaaba, the stone was left besides the house of Allah on its Eastern side and remained there till the times of Umar, the second caliphate of the Muslims. It was then moved a bit away, towards the front of Kaaba (present location), as it was obstructing the performance of ‘Tawaf’ during Hajj. An amazing feature about this stone is that even after hundreds of years, the footprints of Prophet Ibrahim (May Peace Be Up on Him) are fresh, visible and identifiable, one of the miracles of Prophet Ibrahim (May Peace Be Up on Him) and a sign of the oneness of Allah(SWT).

Multazam

The Multazam is the area between the Hajar al-Aswad and the Door of the Ka’bah. It is measures at two metres wide and is a place where duas (supplications) are accepted.

It is approximately two metres wide and is a place where du’as (supplications) are accepted.

  • The Multazam is an area where du’as are accepted. It is a sunnah to hold on to the wall of the Ka’bah in such a manner that a cheek, chest and hands are against the wall. It is reported that Abdullah bin Umar (may Allah be pleased with him) once completed the Tawaf, performed the salah and then kissed the Hajar al-Aswad. Thereafter, he stood between the Hajar al-Aswad and the door of the Ka’bah in such a manner that the cheek, chest and hands were against the wall. He then said, “This is what I saw Rasulullah (peace and blessings of Allah be on him) do.”
  • Abdullah bin Abbas (may Allah be pleased with him) says, “The signs of acceptance for any du’a made between the Hajar al-Aswad and the door of the Ka’bah will certainly be seen.”
  • Mujaahid (may Allah be pleased with him) says, “The area between the Hajar al-Aswad and the door is called the Multazam. Allah will grant a person whatever he asks for there and save him from whatever he seeks refuge from there.”

Zamzam Water

Located within the Masjid Al Haram in Makkah (Saudi Arabia) is the blessed Well of Zamzam. It is situated 20 m (66ft) east of the Kaaba and is the holiest place in Islam. Islamic belief tells us that it is a miraculously generated source of water from God, which began thousands of years ago. Prophet Abraham’s (Ibrāhīm) infant son Ishmael (ʼIsmāʻīl) was thirsty and kept crying for water. Millions of pilgrims visit the well each year to drink blessed Zamzam water from this well while performing Hajj or Umrah pilgrimages.

Islamic tradition tells us that the Zamzam Well was revealed to (Hājar), the second wife of Abraham and mother of Ishmael. Allah (SWT) instructed Prophet Ibrahim to leave his wife and son at a place in the desert. After their provisions ran out Hajar was desperately seeking water for her infant son, but she was unable to find any, as Makkah is located in a hot dry valley with few sources of water. Hagar ran seven times back and forth in the scorching heat between the two hills of Safa and Marwah, looking for water. Getting thirstier by the second, the infant Ishmael scraped the land with his feet, where suddenly water sprang out. There are other versions of the story involving God sending his angel, (Jibra’il), who kicked the ground with his heel (or wing), and the water rose. The name of the well comes from the phrase ZomëZomë, meaning “stop flowing”, a command repeated by Hagar during her attempt to contain the spring water.

Abraham rebuilt the House of Allah near the site of the well, a building which had been originally constructed by Adam and is known as the Kaaba, a building toward which Muslims around the globe face in prayer, five times each day.

Safa and Marwah are the two mountains between which Hajra (upon her be peace) rushed seven times to see if she could spot any water or anyone from whom she could get some in order to give to her infant Ismail (upon him be peace). This action is copied by all pilgrims performing Hajj or Umrah and is known as Sa’ee. The strip of ground between Safa and Marwah is referred to as the Mas’aa.

Safa & Marwa

Safa and Marwah are the well known for being the two mountains which Hajra (upon her be peace) rushed between seven times to see if she could find any water or anyone from whom she could get some provisions from in order to give to her infant son Ismail (upon him be peace). This action is replicated by millions of pilgrims performing Hajj or Umrah and is act known as Sa’ee. The strip of ground between Safa and Marwah is referred to as the Mas’aa.

  • Allah (Glorified and Exalted is He) makes mention of the Safa and Marwah mountains in the Quran in Surah Baqarah:“Verily Safa and Marwah are among the landmarks (distinctive signs) of (the Deen of) Allah.” [2:158]
  • When Hajra (upon her be peace) was passing through the valley between Safa and Marwah in her search for water she kept her eye on her baby son, Ismail (upon him be peace). However, for part of the valley he was hidden from view and she ran this length. It is in emulation of this action that men are required to rush through the same section of the Mas’aa. The area where she ran is today clearly demarcated by green lighting.
  • Abdullah bin Abbas (may Allah be pleased with him) narrates that the Prophet (peace and blessings of Allah be on him) climbed up Mount Safa when Allah (Glorified and Exalted is He) revealed the verse in Surah Shu’ara: “And warn your tribe (O Muhammad) of near kindred.” [26:214]
  • After ascending the Safa mountain he shouted: “Ya Sabahah!” (an Arabic expression when one appeals for help or draws the attention of others to some danger). When the people of Makkah had gathered around him the Prophet (peace and blessings of Allah be on him) said to them, “If I told you that horsemen were advancing to attack you from the valley on the other side of this mountain, will you believe me?”. “Yes”, they replied, “We have always found you truthful.”  The Prophet (peace and blessings of Allah be on him) said,“I am a plain warner to you of a coming severe punishment.” After this vivid analogy the Prophet (peace and blessings of Allah be on him) asked them to save themselves by declaring that Allah was one and that he, Muhammad, was his messenger. He tried to make them understand that if they clung to polytheism and rejected the message he had brought to them, they would face Allah’s punishment. Abu Lahab (his uncle) said, “May you perish! You gathered us only for this reason? “ Then Abu Lahab went away. Upon this ‘Surah al-Lahab’ (Perish the hands of Abu Lahab!) was revealed.
  • After conquering Makkah, the Prophet (peace and blessings of Allah be on him) went to the Hajar al-Aswad and then started performing Tawaaf. After completing the Tawaf, the Prophet (peace and blessings of Allah be on him) climbed Mount Safa, faced towards the Ka’bah and after praising Allah, he started making du’aa. It was from here that he announced (to the local Makkans), “Whoever enters the house of Abu Sufyaan has amnesty and whoever closes the door of his house has amnesty.”
  • Abu Sufyaan’s (may Allah be pleased with him) house was situated close to Marwah.

It is well known that the visit of the Prophet (peace be upon him) and give salutations is one of the greatest blessings and best acts of submission. The visitor must also intend to visit the prophet’s mosque as we have been told that a prayer at Masjid Al-Nabawi is better than a thousand prayers in other mosques except for Al-Masjid al-Haram. The Messenger of Allah peace be upon him said:

“Journeys are only set out for three mosques: Al-Masjid al-Haram, my mosque and Al-Masjid al-Aqsa”.

And Ibn Omar (May Allah be pleased with him) narrated that the messenger of Allah, peace be upon him, said:

“Whoever visits my grave surely will receive my intercession”.

While heading towards Madinah, the visitor should send blessings and salutations upon the Prophet (peace be upon him) as much as possible and to ask Allah (swt) to make him get as much reward and blessings from his visit and to accept his deed, and he invokes: (O Allah! Open the gates of Your Mercy for me and grant me with the visit of Your prophet (peace be upon him) what you have granted Your allies and obedient worshippers, and pardon me and have mercy upon me. You are the best Grantor).

It is recommended to have a bath (Ghusl) before he enters Madinah, to wear his cleanest clothes and to summon the honour of Madinah.

When arriving at the door of the Prophet’s Mosque (peace be upon him), he should step forward with his right leg first while entering and his left leg when leaving.

He enters and should go to Al-Rawda (the garden) (The area between the pulpit and the tomb has a green carpet, whereas the rest of the mosque has a red carpet). He prays two rak’as, then goes to the prophet’s tomb and he stands in front of his honoured face (peace be upon him) at about four cubits (a cubit is 18 inches) from the wall of the honoured tomb, in absolute reverence. Then he salutes without raising his voice, but in a tone between a concealed and an audible voice, out of respect to the Prophet (peace be upon him).

The visitor invokes with all his heart lowering his gaze and voice in calmness and stillness:

“Peace be upon you Messenger of Allah, peace be upon you Prophet of Allah, peace be upon you the dearly loved by Allah, peace be upon you the best blessed among Allah’s creatures, peace be upon you the favoured by Allah, peace be upon you chief of Messengers and the seal of the prophets, peace be upon you leader of “al-ghorr al-muhajaleen” (those who have white spots on their foreheads and are white-footed from prayers and ablution), peace be upon you and upon your sincere virtuous family, peace be upon you and upon your chaste wives, mothers of the believers, peace be upon you and upon all your companions, peace be upon you and upon all good servants of Allah. May Allah reward you Messenger of Allah on our behalf as best He rewarded a prophet and a Messenger for his nation, and may Allah send his blessings upon you whenever praisers mention you and unmindful people forget mentioning you. I testify there is no deity but Allah and I testify that you are His slave and Messenger, His faithful trustee and the best among his creatures. I testify that you have delivered the Message, and fulfilled the Trust, and advised the nation and struggled for the sake of Allah in the best way.”

(He who doesn’t have enough time for that or is unable to memorise the invocation, he may say some parts of the mentioned form)

If anyone entrusted him to salute Allah’s Messenger (peace be upon him) he should say: ” Greetings to you, Messenger of Allah from so and so, son of so and so”.

Then he moves about a cubit to the right and greets Abu Bakr (May Allah be pleased with him) and says : “Peace be upon you the Prophet’s Caliph, peace be upon you companion of Allah’s Messenger in the cave, peace be upon you his companion in travels, peace be upon you the keeper of his secrets. May Allah reward you for Islam and Muslims. O Allah! I ask You to be pleased with him and be pleased with us for him”.

Then he moves about a cubit to the right and greets ‘Umar (May Allah be pleased with him) saying: “Peace be upon you the leader of believers, peace be upon you by whom Allah supported this religion. May Allah reward you the best reward for Islam and Muslims. O Allah, I ask You to be pleased with him and be pleased with us for him”.

Then he returns to the blessed Rawda (Garden) and prays and invokes as much as possible.

It is highly recommended to go to Al-Baqi’ everyday especially on Friday morning after giving salutations to Allah’s Messenger (peace be upon him). When a person gets to Al Baqi they should say:

“Peace be upon you the home of the righteous believers, and we are – by Allah’s will – your followers. O Allah! Forgive the dwellers of Al-Baqi’, O Allah! forgive us and them”.

The visitor should pay a visit to Masjid Quba’ to pray there as the Prophet (peace be upon him) used to go to Quba’ riding and walking, where he used to pray there two rak’as. Preferably, this visit should be on a Saturday (if possible) as the Messenger (peace be upon him) used to go there every Saturday.

It is also advised to visit the martyrs of Uhud on a Thursday, especially the leader of martyrs Hamza(RA), the uncle of the prophet (peace be upon him).

It is recommended to pray all the prayers in Al-Masjid al-Nabawi (the Prophet’s mosque). Abu Hurairah (may Allah be pleased with him) reported that the prophet (peace be upon him) said: 

(A prayer in this mosque of mine is better than a thousand prayers in other mosques except for al Masjid Al-Haram).

 

It is recommended for the visitor when he wants to depart and travel to take leave of the Prophet’s mosque by performing two rak’as and praying for what he likes then he comes to the Noble Prophets Presence (Al Hadra al-Sharifah), pays salutations as he has been doing with each visit and invokes with insistence, whole heartedly and earnestly as he says farewell to the Prophet (peace be upon him) saying: “O Allah! Do not make this visit the last one to the Haram of Your Messenger (peace be upon him) and make my return to the two holy mosques an easy way by Your favor and grace, grant me pardon, good health and protection in this world and in the Hereafter and return us safely, sound and prosperous to our countries”. And he says: “Not saying farewell Messenger of Allah”.

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022
The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Remove unwanted hair, clip nails etc. Perform full GHUSL (Bath) or at least make WUDHU (Ablution) Put on IHRAAM garments Pray 2 RAKAATS Make INTENTION for Hajj Recite the TALBIYYAH

“Labbayka Allaahumma labbayk, labbayka laa shareeka laka labbayk, innal-humda wan- ni mata laka wal-mulk, laa shareeyka lak”

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Pray FAJR at MINA From FAJR of 9th to ASR of 13th. Recite TAKBEER of TASHREEQ after every Salaah. Go to ARAFAAT anytime after sunrise, Pray ZUHR & ASR at ARAFAAT. Perform WUQUF (stand and Pray), make Du’aa and seek Forgiveness until sunset. After SUNSET go to MUZDALIFAH, Pray MAGHRIB & ISHA together (at isha time) at MUZDALIFAH with one Adhaan and one Iqaamat. Collect 70 PEBBLES for stoning. Spend the Night in Ibaadah. Pray Fajr in MUZDALIFAH (at beginning time). Leave for MINA just before SUNRISE. Keep reciting TALBIYYAH frequently.

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Pelt the BIG JAMARAAT (Shaytaan) with 7 Pebbles – TALBIYYAH stops after this. Do QURBANI (Udhiya), SHAVE/ TRIM the hair. Now you are out of the state of ihraam, Performing Tawaaf e Ziyaarah. This can be done anytime up to sunset of the 12th OF DHUL HIJJAH. Go to Makkah and Perform TAWAAF E ZIYAARAH. Pray 2 RAKAATS Salaah behind the Maqaam-e-ibraheem if possible or anywhere in the Haraam. Drink ZAM ZAM water, Perform SA’EE, RETURN back to MINA.

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Remove unwanted hair, clip nails etc. Perform full GHUSL (Bath) or at least make WUDHU (Ablution) Put on IHRAAM garments Pray 2 RAKAATS Make INTENTION for Hajj Recite the TALBIYYAH

“Labbayka Allaahumma labbayk, labbayka laa shareeka laka labbayk, innal-humda wan- ni mata laka wal-mulk, laa shareeyka lak”

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Pray FAJR at MINA From FAJR of 9th to ASR of 13th. Recite TAKBEER of TASHREEQ after every Salaah. Go to ARAFAAT anytime after sunrise, Pray ZUHR & ASR at ARAFAAT. Perform WUQUF (stand and Pray), make Du’aa and seek Forgiveness until sunset. After SUNSET go to MUZDALIFAH, Pray MAGHRIB & ISHA together (at isha time) at MUZDALIFAH with one Adhaan and one Iqaamat. Collect 70 PEBBLES for stoning. Spend the Night in Ibaadah. Pray Fajr in MUZDALIFAH (at beginning time). Leave for MINA just before SUNRISE. Keep reciting TALBIYYAH frequently.

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

08TH DHU AL-HIJJAH

Pelt the BIG JAMARAAT (Shaytaan) with 7 Pebbles – TALBIYYAH stops after this. Do QURBANI (Udhiya), SHAVE/ TRIM the hair. Now you are out of the state of ihraam, Performing Tawaaf e Ziyaarah. This can be done anytime up to sunset of the 12th OF DHUL HIJJAH. Go to Makkah and Perform TAWAAF E ZIYAARAH. Pray 2 RAKAATS Salaah behind the Maqaam-e-ibraheem if possible or anywhere in the Haraam. Drink ZAM ZAM water, Perform SA’EE, RETURN back to MINA.

WE ARE NOW TAKING BOOKINGS FOR HAJJ 2022 - LIMITED PLACES!

CONTACT US TODAY FOR NO OBLIGATION TAILOR MADE QUOTE!

  1. حج اسلام کا اہم ترین رکن اور دینی فریضوں میں عظیم ترین فریضہ ہے ۔

    قرآن مجید ایک مختصر اور پر معنی عبارت میں فرماتا ہے –

    وَلِلَّہِ عَلَی النَّاسِ حِجُّ الْبَیْتِ مَنْ اسْتَطَاعَ إِلَیْہِ سَبِیلا۔

    اور خدا کے لئے لوگوں پر اس گھر کا حج کرنا واجب ہے اگر اس راہ کی استطاعت رکھتے ہوں ۔

    اسی آیہ شریفہ کے ذیل میں فرماتے ہیں :

    وَمَنْ کَفَرَ فَإِنَّ اللهَ غَنِیٌّ عَنْ الْعَالَمِینَ، سورۃ آل عمران: آیت ۹۷

    اور جنہوں نے کفر و سرکشی اختیار کی ، بے شک خداوند کریم تمام عالمین سے بے نیاز ہے

اس اہم عبادت کی حضوصی تاکید احادیث نبویہ میں وارد ہوئی ہے اور اُن لوگوں کے لئے جن پر حج فرض ہوگیا ہے لیکن دنیاوی اغراض یا سستی کی وجہ سے بلاشرعی مجبوری کے حج ادا نہیں کرتے، سخت وعیدیں وارد ہوئی ہیں ان میں سے چند حسب ذیل ہیں

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: فریضۂ حج ادا کرنے میں جلدی کرو کیونکہ کسی کو نہیں معلوم کہ اسے کیا عذر پیش آجائے۔ مسند احمد

شریعت کی رو سے پوری زندگی میں حج صرف ایک بار فرض ہے، اس کے بعد اگر کوئی حج کرتا ہے تو اس کی حیثیت نفل کی ہوگی۔اس حوالے سے ایک حدیث ملاحظہ ہو۔حضرت ابو ہریرہ ص سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے ہمیں خطبہ دیا اور فرمایا:

یَا اَیُّھَاالنَّاسُ قَدْ فَرَضَ اللّٰہُ عَلَیْکُمُ الْحَجَّ فَحَجُّوْا

اے لوگو! اللہ نے تم پر حج فرض کیا ہے، پس تم حج کرو۔

ایک شخض نے کہا :یا رسول اللہ !کیا یہ ہر سال فرض ہے؟آپ صلی الله علیہ وسلم خاموش رہے۔اس نے تین مرتبہ یہ سوال کیا۔توآپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا:

لَوْ قُلْتُ: نَعَمْ لَوَجَبَتْ وَلَمَّا اسْتَطَعْتُمْ

اگر میں ہاں کہہ دیتا تو پھر حج ہر سال فرض ہوجاتا اور تم اس کی ہرگز طاقت نہ رکھتے۔

اس حوالے سے بھی ہمارا معاشرہ افراط و تفریط کا شکار ہے ۔بعض لوگ تو ایسے ہیں جو استطاعت کے باوجود اپنا فرض حج ادا نہیں کرتے اور بعض ایسے ہیں جو ہر سال حج کے لیے جاتے ہیں۔ صاحب استطاعت لوگوں کو چاہیے کہ ہر سال خود حج پر جانے کے بجائے اپنے رشتہ داروں میں سے کسی غریب کو حج کرا دیں یا کسی غریب کی مدد کردیں۔یہ نفلی حج سے زیادہ ثواب کے کام ہیں۔اور باقی وہ لوگ جواستطاعت کے باوجود حج پر نہیں جاتے وہ اس تاخیر کے سبب گناہ کے مرتکب ہورہے ہیں، ان کو چاہیے کہ پہلی فرصت میں اپنا فرض حج ادا کریں۔

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص حج کا ارادہ رکھتا ہے (یعنی جس پر حج فرض ہوگیا ہے) اس کو جلدی کرنی چاہئے۔ ابو داؤد

حضرت ابو امامہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس شخص کو کسی ضروری حاجت یا ظالم بادشاہ یا شدید مرض نے حج سے نہیں روکا اور اس نے حج نہیں کیا اور مرگیا تو وہ چاہے یہودی ہوکر مرے یا نصرانی ہوکر مرے۔ (الدارمی) یعنی یہ شخص یہود ونصاری کے مشابہ ہے۔

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے ارادہ کیا کہ کچھ آدمیوں کو شہر بھیج کر تحقیق کراؤں کہ جن لوگوں کو حج کی طاقت ہے اور انھوں نے حج نہیں کیا ،تاکہ ان پر جزیہ مقرر کردیا جائے۔ ایسے لوگ مسلمان نہیں ہیں، ایسے لوگ مسلمان نہیں ہیں۔ اسی طرح حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے فرمایا کہ جس نے قدرت کے باوجود حج نہیں کیا، اس کے لئے برابر ہے کہ وہ یہودی ہوکر مرے یا عیسائی ہوکر۔ سعید نے اپنی سنن میں روایت کیا

 

  1. قد روى مسلم في صحيحه عن ابْنَ عُمَرَ أَنّ رَسُولَ اللّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ إِذَا اسْتَوَىَ عَلَىَ بَعِيرِهِ خَارِجاً إِلَىَ سَفَرٍ، كَبّرَ ثَلاَثاً، ثُمّ قَالَ

     

    ٌسُبْحَانَ الّذِي سَخّرَ لَنَا هَذَا وَمَا كُنّا لَهُ مُقْرِنِينَ* وَإِنّا إِلَىَ رَبّنَا لَمُنْقَلِبُونَ. اللّهُمّ إِنّا نَسْأَلُكَ فِي سَفَرِنَا هَذَا الْبِرّ وَالتّقْوَىَ. وَمِنَ الْعَمَلِ مَا تَرْضَىَ. اللّهُمّ هَوّنْ عَلَيْنَا سَفَرَنَا هَذَا. وَاطْوِ عَنّا بُعْدَهُ. اللّهُمّ أَنْتَ الصّاحِبُ فِي السّفَرِ. وَالْخَلِيفَةُ فِي الأَهْلِ. اللّهُمّ إِنّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ وَعْثَاءِ السّفَرِ، وَكَآبَةِ الْمَنْظَرِ، وَسُوءِ الْمُنْقَلَبِ، فِي الْمَالِ وَالأَهْلِ“. وَإِذَا رَجَعَ قَالَهُنّ. وَزَادَ فِيهِنّ: “آيِبُونَ، تَائِبُونَ، عَابِدُونَ، لِرَبّنَا حَامِدُونَ“.

     

    اللہ سب سے زیادہ عظیم ہے ۔ اللہ سب سے زیادہ عظیم ہے۔ اللہ سب سے زیادہ عظیم ہے۔پاک ہے وہ رب جس نے اس سواری کو ہمارے قبضے میں دے دیا اور اس کی قدرت کے بغیر ہم اسے قبضہ میں کرنے والے نہیں تھے اور بلاشبہ ہم کو اپنے رب کی طرف جانا ہے ۔اے اللہ ، ہمآپ سے اس سفر میں نیکی اور تقوی، اور ایسےکامکاسوالکرتےہیںجس میں اپ کی خوشنودی ہو

جب آپ سفر کرنا چاہتے ہوں ، تو آپ کے لئے یہ مستحب ہے کہ آپ اس وقت اس سے جس (کے دین ، تجربے اور علم) پر وہ یقین رکھتے ہوں مشورہ لیا کرے۔ مشورہ اس شخص سے لینا چاہیے جو مشورہ کی پیشکش میں مخلص ہو اور نفسانی خواہشات سے بچنا چاہیے ۔ اللہ تبارک وتعالی کا فرمان ہے کہ

[“اور اپنے کاموں میں ان سے مشورت لیا کرو”۔ [آل عمران ۳ :١٥٩

احادیث صحیحه کےمطابق لوگ اپنے کاموں میں حضور محمّدصلى الله عليه وسلم سے مشاورہ کیا کرتے تھے۔

جب آپسفر کا آغاز کردیں تو سنّت کے مطابق آپ کو استخارہ کر کے الله کی رضا طلب کرنی چاہیے ۔اس ک لئے آپ کو دو رکعت نماز نفل ادا کر کے استخارہ کی دوا پڑھنی چاہیے ۔

جب آپ حج، عمرہ یا کسی اور غرض سے سفر کرنے کا ارادہ کر لیںتو اسے ابتداءمیںہیآپ کواپنے تمام گناہوں اور مکروہ اعمال سے توبہکرلینی چاہیے ۔ اور آپنےکسیکے ساتھکچھ غلط کیا ہوتو انغلطیوں کی تلافی کر لیں، اور جن لوگوں سے اس نے اُدھار لیا ہے اس کو جتنا ممکن ہو واپس کر لیں، اور جو کچھ بھی آپکے سپرد کیا گیا ہو )یعنیامانتیں) واپس کردیں اور ان سب سے معافی مانگیں جن کے ساتھ کوئی لیندین ہو یا دوستی ہو۔آپ کو اپنی وصیت بھی تیار کرنی چاہئےاور اس وصیت کا کوئی گواہ بھی ہونا چاہئے، آپ کو ایک ایسا شخص بھی متین کرنا چائے جو آپ کی جگہ قرض ادا کردے اگر آپ خود اسکو ادا نہیں کر سکتے۔آپ کو اپنے خاندان اور اہل و عیال کو بھی ساتھ لے جانا چاہئےجن کی کفالت آپ پر فرض ہے جب تک آپ واپس نہیں آتے۔

آپ کواپنے ماں باپ کی خوشنودی حاصل کرنی چاہیے اور انکی بھی جن کی عزت اور اطاعت کرنا آپ پر فرض ہے۔

جب آپ حج، جہادیا کسی اور غرض سے سفر کررہےہیںتویہ خیال رکھیں کے آپ کا سرمایا حلال ہے اور بداعتمادی سے پاک ہے۔اگر آپ اس کے خلاف جاتے ہیں یا ایسا مال ساتھ رکھتے ہیں جو زور زبردستی سے حاصل کیا گیا ہو یہ مال آپ کے لئے گناہ کا باعث بنجاتا ہے اور اس کے بعد اپ چاہے کتنے ہی آداب کے ساتھ اپنا حج ادا کریں،آپ کا حج مکملنہیں ہوگا.

اگر آپ اپنے ساتھ بہت سارا مال و سامان سفر حج پراس غرض سے لے کے جارہے ہیںکے اس کو غربا میں تقسیم کرینگے تو اسے مستحب کہا جائے گا۔ بشرط یہ کے اپ کا مال و سامان حلال ہو کیوں کے الله عزوجل فرماتے ہیں:

[مومنو! جو پاکیزہ اور عمدہ مال تم کماتے ہوں اور جو چیزیں ہم تمہارے لئے زمین سےنکالتے ہیں ان میں سے (راہ خدا میں) خرچ کرو۔ اور بری اور ناپاک چیزیں دینے کا قصد نہ کرنا کہ (اگر وہ چیزیں تمہیں دی جائیں تو) بجز اس کے کہ (لیتے وقت) آنکھیں بند کرلو ان کو کبھی نہ لو۔ اور جان رکھو کہ خدا بےپروا (اور) قابل ستائش ہے۔[ البقرہ ۲۶۷:۲

جب آپ حجیا جہادکا ارادہ کریں تو پہلے اس کو ادا کرنے ک آداب اور طریقوں سے اچھی طرح واقف ہوجایں کیوں کے کوئی بھی عبادت تب تک قبول نہیں ہوسکتی جب تک عبادت کرنے والے کو اس کے آداب نہیں آتے۔اگر آپ صفر حج پر اپنے ساتھ کوئی حج کی گائڈ بک رکھتے ہیںتا کہ آپ اس سے حج کے مطالق معلومات لیتے رہیں تو اسے مستحب کہا جائے گا. کیوں کے کچھ لوگوں کو گمان ہوتا ہے کہ وو حج کی شریت میں سے کچھ بھول گئے ہیں یا پھر کچھ لوگ دیگر مکیوں کو عبادتکرتے دیکھ کے ویسے ہی عبادت کرنے لگتے ہیںبغیر جانے کہ وو مکّی سہی عبادت کر بھی رہے ہیں یا نہیں۔اس ہی طرح ایک جہادی کو بھی اپنے ساتھ سفر پی جہاد کی گائیڈ بک رکھنی چائے تا کہ اس کو جہاد ک فرائض، دعااور جہاد سے مطالق دیگر معاملات جیسے عورتوں اور بچوں ک ساتھ سلوک، نواہی پر خیانتوغیرہ، معلوم ہوں۔ اس ہی طرح تاجر کو سفر تجارت ک دوران پتا ہونا چاہئے کہ کون سی تجارت جائز ہے کون سی نا جائزاور کیا حرام ہے اور کیا حلال

یہ بھی مستحب ہے کہ اگر اپ کسیایسے کہ ساتھ ہو لیں جو کہ نیکی کو پسند اور گناہ کو ناپسند کرتا ہو تا کہ جب اپ بھٹک جایں تو وہ اپ کو صحیح راہ پر لے آے . اور اگر وہ علم کی روشنی سے آراستہ ہو توافضلیہہے کہ اسکےساتھ سایا بن کر رہیں تا کہ وو شخص اپ کو ہر برائی سے دور رکھے اور اپ کو اپنے ساتھ اچھے کامو میںمشغول کر لے. آپکو سفر کے دوران اپنے ساتھی کو خوش کرنے کی خواہش مند ہونا چاہئے۔ایک دوسرے کی خیالات کو احترم اور صبر سے سننا چاہئے

10. آپ کے لئے یہ بھی یہ بھی مستحب ہے کہ اپ اپنے گھر والوں، عزیز و اقارب، دوست و احباب، پڑوسی اور تمام چاہنے والوں کو الوداع کہ کرسفر کے لئے رخصت ہوں اور سب سے کہیں کہ

أَسْتَـوْدِعُ اللَّهَ ديـنَكَ وَأَمانَتَـكَ، وَخَـواتيـمَ عَمَـلِك

ترجمہ:میں آپ کے دین اور امانت کو اور تمام اعمال کے اچھے خاتمے کو عزو جل کے سپرد کرتا ہوں

خواتین کو سفر کرنے کے لئے محرم کا ساتھ ہونا لازمی ہے، چاہے سفر چھوٹا ہو یا بڑا۔حضرت ابن ابباس رضي الله عنه سے روایت ہے کے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: “کوئی عورت اپنے محرم رشتےدار کے بگیر سفر نے کرے ور کوئی شخص کسی عورت ک پاس اس وقت تک نہ جائے جب تک وہاں اس کا محرم رشیدار موجود نہ ہو”۔

اے الله! ہم پر یہ سفر آسان کردے اور اس کی لمبی مسافت ہم پر لپیٹ دے. اے الله! اس سفر میں تو ہی ہمارا (ساتھی ) ہے اور (تو ہی ہمارا) جانشین ہے گھروالوں میں. اے الله! میں سفر کی مشقّت، (اسکے) تکلیف دہ منظر اور مال اور گھروالوں میں بری تبدیلی سے تیری پناہ میں آتا ہوں.

احادیث نبویہ میں حج بیت اللہ کی خاص اہمیت اور متعدد فضائل احادیث نبویہ میں وارد ہوئے ہیں ، چند احادیث حسب ذیل ہیں

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ کون سا عمل سب سے افضل ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لانا۔ پھر عرض کیا گیا کہ اس کے بعد کون سا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ کی راہ میں جہاد کرنا۔ پھر عرض کیا گیا کہ اس کے بعد کون سا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: حج مقبول۔ بخاری ومسلم

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس شخص نے محض اللہ کی خوشنودی کے لئے حج کیا اور اس دوران کوئی بیہودہ بات یا گناہ نہیں کیا تو وہ (پاک ہوکر) ایسا لوٹتا ہے جیسا ماں کے پیٹ سے پیدا ہونے کے روز (پاک تھا)۔ بخاری ومسلم

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ایک عمرہ دوسرے عمرہ تک ان گناہوں کا کفارہ ہے جو دونوں عمروں کے درمیان سرزد ہوں اور حج مبرور کا بدلہ تو جنت ہی ہے۔ بخاری ومسلم

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پے درپے حج وعمرے کیا کرو۔ بے شک یہ دونوں (حج وعمرہ) فقر یعنی غریبی اور گناہوں کو اس طرح دور کردیتے ہیں جس طرح بھٹی لوہے کے میل کچیل کو دور کردیتی ہے۔ ابن ماجہ

حضرت عمرو بن عاص رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: اپنا دایاں ہاتھ آگے کیجئے تاکہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بیعت کروں۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا دایاں ہاتھ آگے کیا تو میں نے اپنا ہاتھ پیچھے کھینچ لیا۔ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دریافت کیا، عمرو کیا ہوا۔ میں نے عرض کیا، یا رسول اللہ! شرط رکھنا چاہتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: تم کیا شرط رکھنا چاہتے ہو؟ میں نے عرض کیا ( گزشتہ) گناہوں کی مغفرت کی۔ تب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کیا تجھے معلوم نہیں کہ اسلام (میں داخل ہونا) گزشتہ تمام گناہوں کو مٹادیتا ہے، ہجرت گزشتہ تمام گناہوں کو مٹادیتی ہے اور حج گزشتہ تمام گناہوں کو مٹادیتا ہے۔ مسلم

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: جو حاجی سوار ہوکر حج کرتا ہے اس کی سواری کے ہر قدم پر ستّر نیکیاں لکھی جاتی ہیں اور جو حج پیدل کرتا ہے اس کے ہر قدم پر سات سو نیکیاں حرم کی نیکیوں میں سے لکھی جاتی ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا گیا کہ حرم کی نیکیاں کتنی ہوتی ہیں، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ایک نیکی ایک لاکھ نیکیوں کے برابر ہوتی ہے۔ بزاز، کبیر، اوسط

ام المؤمنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے عرض کیا، یا رسول اللہ! ہمیں معلوم ہے کہ جہاد سب سے افضل عمل ہے، کیا ہم جہاد نہ کریں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: نہیں (عورتوں کے لئے) عمدہ ترین جہاد حج مبرور ہے۔ بخاری

ام المؤمنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کیا عورتوں پر بھی جہاد (فرض) ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ان پر ایسا جہاد فرض ہے جس میں خوں ریزی نہیں ہے اور وہ حج مبرور ہے۔ ابن ماجہ

* حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: حج اور عمرہ کرنے والے اللہ کے مہمان ہیں۔ اگر وہ اللہ تعالیٰ سے دعائیں کریں تو وہ قبول فرمائے، اگر وہ اس سے مغفرت طلب کریں تو وہ ان کی مغفرت فرمائے۔ ابن ماجہ

* حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب کسی حج کرنے والے سے تمہاری ملاقات ہو تو اُس کے اپنے گھر میں پہونچنے سے پہلے اس کو سلام کرو اور مصافحہ کرو اور اس سے اپنی مغفرت کی دعا کے لئے کہوکیونکہ وہ اس حال میں ہے کہ اس کے گناہوں کی مغفرت ہوچکی ہے۔ مسند احمد

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: حج مبرور کا بدلہ جنت کے سوا کچھ نہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ حج کی نیکی کیا ہے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: حج کی نیکی‘ لوگوں کو کھانا کھلانا اور نرم گفتگو کرنا ہے۔ رواہ احمد والطبرانی فی الاوسط وابن خزیمۃ فی صحیحہ۔ مسند احمد اور بیہقی کی روایت میں ہے کہ حضورِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: حج کی نیکی‘ کھانا کھلانا اور لوگوں کو کثرت سے سلام کرنا ہے ۔

 

حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: حج میں خرچ کرنا جہاد میں خرچ کرنے کی طرح ہے، یعنی حج میں خرچ کرنے کاثواب سات سو گنا تک بڑھایا جاتا ہے۔ مسند احمد

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیرے عمرے کا ثواب تیرے خرچ کے بقدر ہے یعنی جتنا زیادہ اس پر خرچ کیا جائے گا اتنا ہی ثواب ہوگا۔ الحاکم

حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب حاجی لبیک کہتا ہے تو اس کے ساتھ اس کے دائیں اور بائیں جانب جو پتھر، درخت اور ڈھیلے وغیرہ ہوتے ہیں وہ بھی لبیک کہتے ہیں اور اسی طرح زمین کی انتہا تک یہ سلسلہ چلتا رہتا ہے (یعنی ہر چیز ساتھ میں لبیک کہتی ہے)۔ ترمذی، ابن ماجہ

 

جس شخص میں مندرجہ ذیل شراءط پاءیجاتیہوں۔اس پرحج واجب ہوجاتاہے۔

بالغ ہو۔

آزادہو۔

اتناوقتہوکہمکہجاکرتماماعمالِحجبجالاسکے۔

آنےجانےکےلیےسواریاورسفرکےاخراجات (مثلامکہمیںقیاموطعاماورقربانی) موجودہوں۔

جنلوگوںکانانونفقہاسپرواجبہےانہیںاپنیواپسیتککےاخراجاتدینےکےپیسےہوں۔

راستہمحفوظہویعنیراستہمیںجان،مالاورعزتکوکوءیخطرہنہہو۔

رصحتکےاعتبارسےسفرکےقابلہویعنیایسامرضیاکمزورینہہوکہراستےکیمشکلاتبرداشتنہکرسکے۔

حجسےواپسیپراپنےاورگھروالوںکےلیےروزیکماسکے۔

جس شخص میں حج کی فرضیت کی مندرجہ بالا پانچوں شرائط پائی جائیں تو اس پر حج فرض ہے۔اب اس حج کوادا کرنے کا مرحلہ آتا ہے اور حج کی ادائیگی کی بھی مندرجہ ذیل چند شرائط ہیں۔یہ شرائط جس شخص میں پائی جائیں گی اس کے ذمے خود سے حج اداکرنا ضروری ہوگا۔اس صورت میں یہ شخص اپنی جگہ کسی اور کو حج کے لیے نہیں بھیج سکتا ۔

صحت مند ہونا:حج کی ادائیگی کی اولین شرط صحت مند اور تندرست ہونا ہے۔اگر کوئی شخص ایسا بیمار ہے کہ وہ مکہ مکرمہ کا سفر نہیں کر سکتا تواس پر خود سے حج کی ادائیگی فرض نہیں ہے۔

راستے کا پر امن ہونا: اگر راستہ پر امن نہیں ہے تو اس صورت میں بھی اس شخص پر حج کی ادائیگی ضروری نہیں ہے‘لیکن اب چوں کہ ہوائی جہاز جیسی سفری سہولیات میسر ہیں کہ انسان ہزاروں میل کا سفر گھنٹوں میں طے کر لیتا ہے تو اب یہ شرط تقریباً معدوم ہوچکی ہے۔

عورت کے لیے شوہر یا محرم کا ساتھ ہونا: مندرجہ بالا شرائط کے ساتھ عورت پر حج فرض ہونے کی ایک اضافی شرط یہ ہے کہ اس کے ساتھ شوہر یا محرم ہو۔عورت کا بغیر شوہر یامحرم کے حج کے سفر پر جانا جائز نہیں ہے۔ حضرت ابن عباس رضی الله عنہماسے روایت ہے کہ رسول اللہ انے فرمایا:

لاَ یَخْلُوَنَّ رَجُلٌ بِامْرَأَةٍ وَلَا تُسَافِرَنَّ امْرَأَ ةٌ اِلاَّ وَمَعَھَا مَحْرَمٌ فَقَالَ رَجُلٌ: یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ، اکْتُتِبْتُ فِیْ غَزْوَةِ کَذَا وَکَذَا، وَخَرَجَتِ امْرَاَتِیْ حَاجَّةً․؟ قَالَ: اذْھَبْ، فَحُجَّ مَعَ امْرَأَتِکَ

کوئی آدمی کسی عورت کے ساتھ خلوت نہ کرے اور نہ کوئی عورت سفر کرے مگر اس کے ساتھ محرم ہو۔ ایک آدمی نے کہا :اے اللہ کے رسول!فلاں فلاں غزوہ میں شرکت کے لیے میرا نام لکھ دیا گیا ہے اور میری بیوی حج کی ادائیگی کے لیے نکلی ہے ۔ آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا: ”جا اور اپنی بیوی کے ساتھ حج کر!

نوٹ:ہمارے معاشرے میں اس حوالے سے کافی کوتاہیاں دیکھنے میں آتی ہیں‘مثلاً عورتیں بغیر محرم کے حج کے لیے چلی جاتیں ہیں۔ ایک عورت کے ساتھ اس کا شوہر یا محرم ہوتا ہے تو دوسری عورت اس عورت کے ساتھ چلی جاتی ہے کہ چلو ایک کے ساتھ تومحرم ہے نا‘ حالاں کہ یہ سراسر غلط ہے۔منہ بولے بھائی محرم نہیں ہوتے ،اس لیے ان کے ساتھ حج پر جانا جائز نہیں ہے۔پاکستانی قانون کے مطابق چوں کہ عورت بغیرمحرم کے نہیں جاسکتی ،اس لیے عورتیں گروپ لیڈر یا کسی غیر محرم کو محرم بنا کر حج پر چلی جاتی ہیں ،ایسا کرنے میں دوگناہ لازم آتے ہیں، ایک غلط بیانی کا اور ایک بغیرمحرم کے حج پر جانے کا۔

عورت کا عدت میں نہ ہونا:عورت کے لیے ایک اوراضافی شرط یہ بھی ہے کہ وہ عدت میں نہ ہو۔ عدت بھی حج کی ادائیگی کے لیے رکاوٹ ہے۔

نوٹ:یہاں یہ بات بھی ملحوظ رہے کہ اگر کوئی عورت بغیر محرم کے یا عدت کے دوران حج پر چلی جاتی ہے تو اس صورت میں اس کافرض حج تو ادا ہوجائے گا ‘لیکن بغیر محرم کے یا دورانِ عدت سفر کرنے کا گناہ اس کے سر رہے گا۔

حج کی ادائیگی کا طریقہ بیان کرنے سے پہلے ضرور ی معلوم ہوتا ہے کہ حج کی اقسام بیان کی جائیں۔حج کی تین قسمیں ہیں:

حج اِفراد: اِفراد کے لغوی معنی ہیں:اکیلااور تنہا، جب کہ شرعی اصطلاح میں صرف حج کی نیت سے احرام باندھ کر حج کے افعال و مناسک ادا کرنا اور عمرہ ساتھ نہ ملانا ‘حج اِفراد کہلاتا ہے۔ حج اِفراد کرنے والے کو ”مفرد“ کہا جاتا ہے۔ امام شافعیرحمة الله عليه کے نزدیک ”حج افراد“ افضل ہے۔ اس حوالے سے یہ یاد رکھیں کہ مفرد پر قربانی واجب نہیں‘ مستحب ہے، جب کہ حج کی باقی دونوں اقسام میں قربانی واجب ہوتی ہے۔

حج قران: قران(ق کے کسرہ کے ساتھ) کے لغوی معنی ہیں:دو چیزوں کوباہم ملادینا، جب کہ شرعی اصطلاح میں عمرہ اور حج دونوں کی نیت سے احرام باندھنا اور ایک ہی احرام کے ساتھ پہلے عمرہ اورپھر حج اداکرنا اور درمیان میں احرام نہ کھولنا‘حج قران کہلاتا ہے۔حج قران کرنے والے کو ”قارن“کہا جاتا ہے۔امام ابو حنیفہ کے نزدیک حج قران افضل ہے۔

حج تمتعتمتع کے لغوی معنی ہیں:نفع اٹھانا، جب کہ شرعی اصطلاح میں عازمِ حج کا میقات سے پہلے عمرہ کی نیت سے احرام باندھنا اورعمرہ کے افعال ومناسک ادا کر نے کے بعد احرام کھول دینا اور پھر اسی سال حج کے دنوں میں حج کی نیت سے دوبارہ احرام باندھنا اور مناسک حج ادا کرنا‘ حج تمتع کہلاتاہے۔حج تمتع کرنے والے کو ”متمتع“کہا جاتا ہے۔امام امالکرحمة الله عليه کے نزدیک حج تمتع افضل ہے۔

احرام

حالت احرام میں ممنوع کام اور ان کا کفارہ

جسم کے کسی حصے سے بال اکھاڑنا، کاٹنایا مونڈنا۔

ناخن تراشنا۔

خوشبولگانا۔

مرد کا اپنے سرکو ڈھانپنا۔

مرد کے سلے ہوئے کپڑے پہننا، اور عورت کو دستانے اور نقاب پہننا۔ بخاری

نوٹ : اگر ان مذکورہ پانچ ممنوع کاموں میں سے کوئی کام غلطی سے یا بھول کر ہو جائے تو اس پر کوئی کفارہ نہیں ہے مگر جو جان بوجھ کر ان میں سے کسی کا ارتکاب کرے گا تو اس پر یہ کفارہ ہے

تین دن کے روزے رکھنا یا چھ مسکینو ں کو ایک وقت کا کھانا کھلانا، یا دم دینا ۔

فمن کان منکم مریضا او بہ اذی من راسہ ففدیة من صیام او صدقة او نسک : ال عمران

جنگلی یا میدانی جانوروں کا شکار کرنا یا شکار کرنے میں مدد کرنا، اس کا کفارہ اسی جانورکی مثل صدقہ دینا ہے۔

یٰٓاَیُّھَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا لَا تَقْتَلُوْا الصَّیْدَ وَ اَنْتُمْ حُرُمٌ، وَ مَنْ قَتَلَہ مِنْکُمْ مُّتَعَمِداً فَجَزَأئٌ مِّثْلُ مَا قَتَلَ مِنَ النَّعَمِ یَحْکُمُ بِہ ذَوَا عَدْلٍ مِّنْکُمْ ھَدْیَا، بٰلِغَ الْکَعْبَۃِ اَوْ کَفَّارَۃٌ طَعَامُ مَسٰکِیْنَ اَوْعَدْلُ ذٰلِکَ صِیَاماً : المائدہ:۹۶

حالت احرام میں منگنی کرنا یا کروانا ، نکاح کرنا یا کروانا اس کا کفارہ صرف توبہ اور استغفار کرناہے۔

لا ینکح المحرم ولا یخطب : مسلم

یوی سے بوس وکنار کرنا اگر انزال نہ ہو تو اس پر توبہ اور استغفار کرنا ہے، اور اگر انزال ہوجائے تو اس کا کفارہ ایک گائے یا اونٹ ذبح کرکے گوشت مکہ کے فقیروں میں تقسیم کرنا ہے۔

بیوی سے ہم بستری کرنا۔۱-اگر یہ ہم بستری ۱۰؍ تاریخ کو جمرہ کبریٰ کو کنکریاں مارنے سے پہلے تھی تو اس کا حج باطل ہو جائے گا۔۲-حج کے بقیہ کام پورے کرے گا۔ ۳-اگلے سال دوبارہ حج کرے گا۔ ۴- ایک اونٹ یا گائے حرم کی حدود میں ذبح کرکے فقرائے مکہ میں تقسیم کرے گا۔ اور اگر ہم بستری ۱۰؍ تاریخ کو جمرہ کبریٰ کو کنکریاں مار نے کے بعد کی ہے تو اس کا حج تو صحیح ہوگا لیکن اس کو دم دینا ہوگا۔ : حاکم، بیہقی، موطا

اَلْحَجُّ اَشُھُرٌ مَّعْلُوْمٰتٌ، فَمَنَ فَرَض فِیْھِنَّ الْحَجَّ فَلَا رَفَثَ وَ لَا فُسُوْقَ، وَ لَا جِدَالَ فِي الْحَجِّ، وَ مَا تفْعَلُوْا مِنْ خَیْرٍ یَّعَلَمُہُ اللہ، وَ تَزَوَّدُوْا فَإِنَّ خَیْرَ الزَّادِ التَّقْوٰی وَ اتَّقُوْنِ یٰاُولٰي الْاَلْبَابِ : سورۃ البقرۃ : ۱۹۷

نوٹ: اگر کسی خاتون کو حالت احرام میں حیض یا نفاس وغیرہ کا خون آجائے تو وہ بیت اللہ کے طواف کے علاوہ حج اور عمرہ کے باقی تمام ارکان اور واجبات ادا کریں گی۔ (بخاری، مسلم) دوران سفر خواتین حیض کو روکنے کے لئے دوا کا استعمال کرسکتی ہیں اور حالت احرام میں دانتوں کی صفائی کے لئے ٹوتھ برش اور جسم کی صفائی کے لئے صابن بھی استعمال کیا جاسکتا ہے۔

میقات کےعلاوہ احرام کےواجب میں تین مزید چیزیں شامل ہیں

نیت کرنا

تلبیہ پڑھنا

دوچادریںپہننا

نیتیعنی مکلف ارادہ کرے کہ عمرہ یا حج قربة الی اللہ انجام دوں گا۔ نیت میں معتبر نہیں کہ اعمال کو تفصیل سے جانتا ہو بلکہ اجمالی معرفت بھی کافی ہے۔ لہذا اگر نیت کرتے وقت مثلا عمرہ میں جو کچھ واجب ہے تفصیلا نہ جانتا ہو تو ایک ایک عمل کو رسالہ عملیہ یا قابل اعتماد شخص سے سیکھ کر انجام دینا کافی ہے۔

الفیہ تلبیہ بھی صرف ایک دفعہ پڑھنا واجب ہے ۔ البتہ تکرار مستحب ہے۔ لیکن اسکو ۹ ذی الحجہ کو عرفات کے میدان میں زوال تک پڑھ سکتے ہیں۔اسکے بعد اجازت نہیں

ببعد ازاں وہی ۲۵ باتیں حرام ہو جاءیں گی جنکا تذکرہ کیا جا چکا ہے۔ یہ احرام ۸ ذی الحجہ کو باندھنا بہتر ہے۔

نماز میں تکبیرة الاحرام کی طرح تلبیہ کے الفاظ بھی سیکھنا اور صحیح ادا کرنا ضروری ہے۔ خواہ کسی دوسرے شخص کی مدد سے صحیح ادا کر سکے۔ لیکن اگر کسی کو تلبیہ یاد نہ ہو اور کوئی پڑھانے والا بھی نہ ہو تو جس طرح سے ادا کر سکتا ہو ادا کرے۔ بشرطیکہ اتنا غلط نہ ہو کہ عمومی طور پر تلبیہ ہی نہ سمجھا جائے اور اس صورت میں احوط یہ ہے کہ جمع کرے یعنی دوسری زبان کے حروف مگر عربی زبان میں تلبیہ پڑھے، ترجمہ بھی پڑھے اور کسی کو تلبیہ پڑھنے کے لیے نائب بھی بنائے ۔

کسی حادثے میں گونگا ہونے والا شخص اگر تلبیہ کے الفاط کی کچھ مقدار ادا کر سکتا ہو تو جتنی مقدار تلبیہ کہہ سکتا ہے کہے اور اگر بالکل ادا نہ کر سکتا ہو تو تلبیہ کو دل سے گزارے اور دل سے گزارتے وقت اپنی زبان اور ہونٹوں کو حرکت دے اور اپنی انگلی سے اس طرح اشارہ کرے کہ گویا الفاظ تلبیہ کی تصویر پیش کر رہا ہے۔ لیکن وہ شخص جو پیدائشی گونگا ہو یا پیدائشی گونگے کی طرح ہو تو وہ اپنی زبان اور ہونٹوں کو اس طرح حرکت دے جس طرح تلبیہ کہنے والا شخص حرکت دیتا ہے اور اس کے ساتھ انگلی سے بھی اشارہ کرے۔

اگر کوئی احرام کے دو کپڑے پہننے کے بعد اور اس جگہ سے گزرنے سے پہلے جس جگہ تلبیہ کہنے میں تاخیر کرنا جائز نہیں ہے شک کرے کہ تلبیہ کہی ہے یا نہیں تو سمجھے کہ نہیں کہی اور اگر تلبیہ کہنے کے بعد شک کرے کہ صحیح تلیبہ کہی ہے یا نہیں تو سمجھے کہ صحیح تلبیہ کہی ہے۔

مگر انہیں اس لباس کو اتارنے کے بعد پہنا جائے جس کا پہننا احرام والے پر حرام ہے۔ اس سے بچے مستثنی ہیں اور بجے لباس اتارنے میں مقام فخ تک تاخیر کر سکتے ہیں۔ جب کہ وہ اس راستے سے جارہے ہوں ۔

ظاہر یہ ہے کہ ان دو کپڑوں کو پہننے کا کوئی طریقہ معتبر نہیں ہے چنانچہ ایک جس طرح چاہے لنگ کے طور پر استعمال کرے اور دوسرے کو چادر کے طور پر بغل سے نکال کر کندھے پر ڈال لے یا کسی بھی طرح سے اوڑھے اگر چہ احوط یہ ہے کہ جس طرح عام طور پر ان کپڑوں کو استعمال کیا جاتا ہے اسی طرح استعمال کرے

اگر کوئی مسئلہ نہ جاننے کی بنا پر یا بھول کر قمیض پر احرام باندھ لے تو قمیض اتار دے، اس کا احرام صحیح ہوگا۔ بلکہ اظہر یہ ہے کہ اگر جان بوجھ کر قمیض کے اوپر احرام باندھ لے تب بھی اس کا احرام (قمیض اتارنے کے بعد ) صحیح ہوگا۔ لیکن اگر احرام کے بعد قمیض پہن لے تو اس کا حرام بغیر شک کے صحیح ہے ۔ تاہم لازم ہے کہ قمیض پھاڑ دے اور پاؤں کی طرف سے اتار دے ۔

حالت احرام میں خواہ شروع میں یا بعد میں سردی یا گرمی سے بچنے کے لیے یا کسی دوسری وجہ سے دو کپڑوں سے زیادہ پہننے میں اشکال نہیں ہے۔

8 ذو الحجہ کو نمازِ فجرمکہ میں باجماعت ادا کریں اور غسل یا وضو کر کے احرام باندھ لیں۔ اس کے بعد احرام کے دو رکعت نفل ادا کریں

احرام کے نفل سے فارغ ہو کر حج کی نیت کریں اور یہ دعا پڑھیں: اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اُرِیْدُ الْحَجَّ فَیَسِّرْہُ لِیْ وَتَقَبَّلْہُ مِنِّیْ ”اے اللہ! میں حج کی نیت کرتا ہوں کرتی ہوں، اس کو میرے لیے آسان فرما اور اسے میری طرف سے قبول فرما“۔اس کے بعد تلبیہ پڑھیں اور دعا کریں ۔اب احرام کی پابندیاں شروع ہو گئیں۔

٭… منیٰ روانگی اوروقوفِ منیٰ :طلوعِ آفتاب کے بعد منیٰ روانہ ہو جائیں۔ 8ذوالحجہ کی ظہر‘ عصر‘ مغرب عشااور فجر کی نمازیں منیٰ میں باجماعت ادا کریں۔

نوٹ:اگرکوئی شخص 8ذوالحجہ کو منیٰ نہیں جاتا اور مکہ مکرمہ میں ہی رہتا ہے اور یہی سے۹ذوالحجہ کو عرفات کے لیے روانہ ہوجاتا ہے تو اس طرح کرنے سے مناسک حج کے حوالے سے تو کوئی خرابی لازم نہیںآ تی، اس لیے کہ8ذوالحجہ کو منیٰ میں حج کا کوئی مناسک ادا نہیں ہوتا، البتہ ا س طرح کرنے سے نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کی سنت کی خلاف ورزی ہوگی اور یہ شخص اس کی وجہ سے گناہ گار ہوگا۔اس لیے افضل یہی ہے کہ سنت نبوی کی پاس داری کرتے ہوئے 8ذوالحجہ کو منیٰ جائیں اور اگلے دن یہیں سے عرفات کے لیے روانہ ہوں۔

٭…منیٰ میں نمازِ فجر کی ادائیگی كى بعد

٭… میدانِ عرفات روانگی اور وقوفِ عرفہ: طلوعِ آفتاب کے بعد وضو کر کے تلبیہ کہتے ہوئے عرفات روانہ ہو جائیں۔اگرکوئی نمازِ فجر کے بعد اور طلوعِ آفتاب سے پہلے عرفات کی طرف روانہ ہوگیا تو اس میں بھی کوئی حرج نہیں ہے۔ زوال سے سورج غروب ہونے تک میدانِ عرفات میں وقوف کرنا حج کا سب سے بڑا رکن ہے۔اگر کوئی حاجی زوال سے غروبِ آفتاب تک ایک لمحہ کے لیے بھی عرفات پہنچ گیا تو اس کا حج ہوگیا۔ رسول اللہصلی الله علیہ وسلم کا ارشاد ہے : ((اَلْحَجُّ عَرَفَةُ)) یعنی اصل حج تو عرفہ ہی ہے۔ ٭…دورانِ وقوفِ عرفہ تلبیہ‘دعائیں اور استغفارکرنا:یہ وقت قبولیت ِدعا کا خاص وقت ہے، اس لیے تمام وقت تلبیہ‘ خشوع و خضوع اور گریہ وزاری کے ساتھ دعا اور استغفار میں مشغول رہیں ۔اپنے ماضی کے گناہوں اور کوتاہیوں پر اللہ کے حضور معافی کے اور اپنے مستقبل کے لیے گناہوں سے پاک زندگی کے طالب ہوں۔وقوفِ عرفہ کے موقع پر نبی اکرمصلی الله علیہ وسلم نے مندرجہ ذیل دعا کو بہترین دعااور بہترین کلمہ قرار دیاہے :

لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہ لَا شَرِیْکَ لَہ لَہ الْمُلْکُ وَلَہ الْحَمْدُ وَھُوَ عَلٰی کُلِّ شَیْءٍ قَدِیْرٌ ٌ

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: عرفہ کے دن کے علاوہ کوئی دن ایسا نہیں جس میں اللہ تعالیٰ کثرت سے بندوں کو جہنم سے نجات دیتے ہوں، اس دن اللہ تعالیٰ (اپنے بندوں کے) بہت زیادہ قریب ہوتے ہیں اور فرشتوں کے سامنے اُن (حاجیوں) کی وجہ سے فخر کرتے ہیں اور فرشتوں سے پوچھتے ہیں (ذرا بتاؤ تو) یہ لوگ مجھ سے کیا چاہتے ہیں ۔ مسلم

حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: غزوۂ بدر کا دن تو مستثنیٰ ہے اسکو چھوڑکر کوئی دن عرفہ کے دن کے علاوہ ایسا نہیں جس میں شیطان بہت ذلیل ہورہا ہو، بہت راندہ پھر رہاہو، بہت حقیر ہورہا ہو، بہت زیادہ غصہ میں پھر رہا ہو، یہ سب کچھ اس وجہ سے کہ وہ عرفہ کے دن اللہ تعالیٰ کی رحمتوں کا کثرت سے نازل ہونا اور بندوں کے بڑے بڑے گناہوں کا معاف ہونا دیکھتا ہے۔مشکوۃ

غروب آفتاب کے وقت مزدلفہ روانگیغروب آفتاب کے بعد مغرب کی نماز پڑھے بغیر‘ تلبیہ کہتے ہوئے مزدلفہ روانہ ہوجائیں۔

وقوفِ مزدلفہ اور نماز مغرب و عشا کی اکٹھی ادائیگی:مزدلفہ پہنچ کرمغرب وعشا کی نمازیں ایک اذان اور ایک اقامت کے ساتھ عشا کے وقت میں باجماعت ادا کریں۔ پہلے مغرب کے تین فرض ادا کریں‘ پھر تکبیر تشریق اور تلبیہ پڑھیں۔اس کے بعد ساتھ ہی عشا ادا کریں اور تکبیر تشریق اور تلبیہ پڑھیں۔پھر مغرب کی دو سنتیں‘ پھر عشا کی دو سنتیں اور پھر وتر ادا کریں۔ اگر کسی نے مزدلفہ پہنچنے سے پہلے ہی مغرب کی نماز پڑھ لی تو اس کی نماز نہ ہو گی اور اس کے ذمے مزدلفہ پہنچ کر ماقبل بیان کردہ ترتیب سے دوبارہ نماز پڑھنا لازم ہو گا۔

مزدلفہ میں ذکر واذکار اور دعا ئیں کرنایہ بڑی فضیلت والی اور مبارک رات ہے ‘اس میں زیادہ سے زیادہ ذکر و تلاوت ‘ تلبیہ اور دُعا وٴں کا اہتمام کریں۔ اس رات اپنے پروردگار کو اس خشوع و خضوع سے یاد کریں کہ دل میں اللہ رب العزت کے علاوہ کسی کی یاد نہ ہو۔بالفاظِ قرآنی

﴿فَاذْکُرُوا اللّٰہَ عِنْدَ الْمَشْعَرِ الْحَرَامِ وَاذْکُرُوْہُ کَمَا ھَدٰٹکُمْ لبقرة:198

پس اللہ کو یاد کرو مشعر حرام کے نزدیک( مشعر ِحرام ایک پہاڑ کا نام ہے جو مزدلفہ میں واقع ہے) اور اس کو ایسے یاد کرو جیسے اس نے تمہیں ہدایت کی ہے۔

مزدلفہ میں نمازِ فجر ادا کرنا:وقوفِ مزدلفہ کی رات دعاوٴں میں مشغول ہو کر گزارنے کے بعد فجر کی نماز اول وقت میں باجماعت ادا کریں۔ پھر سورج نکلنے تک ذکر و اذکار ‘دعا و استغفاراور تلبیہ میں مشغول رہتے ہوئے وہیں وقوف کریں۔

مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھانااس دوران مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھائیں، جو جمرات کو مارنے کے لیے استعمال کی جا ئیں گی۔ہر حاجی چنے یا کھجور کی گٹھلی کے برابر ستر کنکریاں مزدلفہ سے اٹھا ئے۔

منیٰ روانگی اور جمرئہ عقبہ( بڑے شیطان )کی رمی:طلوعِ آفتاب کے وقت منیٰ روانہ ہو جائیں اور منیٰ پہنچ کر سب سے پہلے جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی کیجیے۔ 10 ذو الحجہ کو صرف بڑے شیطان کی رمی کی جاتی ہے ۔ اس دن رمی کا افضل وقت طلوعِ آفتاب سے زوال تک ہے، لیکن اس کا جائز وقت 10 ذوالحجہ کے طلوعِ آفتاب سے لے کر اگلے دن 11ذوالحجہ کے صبح صادق طلوع ہونے سے پہلے تک ہے۔

رمی کا طریقہ:10 ذوالحجہ کو صرف بڑے شیطان کی، جب کہ اگلے دونوں دن تینوں جمرات کی رمی کی جاتی ہے، اس لیے ضروری معلوم ہوتا ہے کہ رمی کا سنت طریقہ بھی ذکر کر دیا جائے۔

رمی کا طریقہ یہ ہے کہ سات کنکریاں ہاتھ میں لے کر اس طرح کھڑے ہوں کہ منیٰ آپ کے دائیں جانب اور مکہ مکرمہ بائیں جانب ہو۔ دائیں ہاتھ کے انگوٹھے اور شہادت کی انگلی سے پکڑ کر ایک ایک کنکری ستون پر مارتے جائیں( کنکر کا احاطے میں گرنا کافی ہے‘ستون کو لگنا ضروری نہیں)۔ ہر کنکری مارتے وقت ”بسم اللّٰہ اللّٰہ اکبر“ کہیں اور یہ دعا پڑھیں

اَللّٰھُمَّ اجْعَلْہُ حَجًّا مَبْرُوْرًا وَذَنْبًا مَغْفُوْرًا

”اے اللہ! میرے حج کو قبول فرما اور میرے گناہوں کو بخش دے۔“

نوٹ:رمی کے دوران تلبیہ پڑھنا بند کر دیں اور جمرہٴ عقبہ (بڑے شیطان)کی رمی کے بعداُس کے پاس کھڑے ہوکر دعا نہ مانگیں۔

قربانی کرنارمی کے بعد قربانی کیجیے۔قربانی کرنا واجب ہے۔اس قربانی کے لیے تین دن ‘یعنی 10‘11‘12 ذو الحجہ مقرر ہیں۔ ان دنوں میں جب چاہیں قربانی کر لیجیے، جب کہ پہلے دن قربانی کرنا افضل ہے۔

حلق یا قصر کرواناقربانی کرنے کے بعد مرد پورے سر کے بال منڈوائیں یاپورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کاٹیں ‘مگر منڈوانا افضل ہے۔ خواتین پورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کتروائیں ۔ تاہم چوتھائی سر کے بال کٹ جانے کا اطمینان ضرورکرلیں۔ حلق یا قصر کی شرعی حیثیت فرض کی ہے اور اس کے بعد سوائے ازدواجی تعلق قائم کرنے کے احرام کی باقی تمام پابندیاں ختم ہو جاتی ہیں۔

نوٹماقبل 10ذوالحجہ کے جوتین مناسک:جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی۔ قربانی اور حلق یا قصرذکر کیے ہیں، ان کو اسی ترتیب سے ادا کرنا واجب ہے ۔اگر کسی نے اس ترتیب کے اُلٹ کیا تو اس پر دم لازم ہو گا۔

طوافِ زیارت:حلق یا قصر کے بعد غسل کیجیےپھر سلے ہوئے کپڑے پہن کر یا احرام ہی کی چادروں میں مکہ جا کر طواف کیجیے۔ اس کا وقت حلق سے فارغ ہونے کے بعد 12ذو الحجہ کے غروب آفتاب تک ہے۔ افضل یہی ہے کہ10 ذو الحجہ ہی کو کر لیا جائے‘ ورنہ 12ذو الحجہ تک کبھی بھی کیا جاسکتا ہے۔ طوافِ زیارت کی شرعی حیثیت فرض کی ہے۔

صفا و مروہ کی سعی طوافِ زیارت اور دو رکعت نمازِ طواف سے فارغ ہو کر صفا و مروہ کی سعی کریں ۔ صفا مروہ کی سعی کرنا واجب ہے۔

منیٰ واپسی10ذوالحجہ کو مندرجہ بالا تمام افعال و مناسک کی ادائیگی کے بعد منیٰ واپس آجائیں اور رات منیٰ میں ہی گزاریں۔

تینوں جمرات کی رمی :11 ذو الحجہ کو زوال کے بعد تینوں جمرات کی رمی کریں، بایں طور کہ پہلے جمرئہ اولیٰ (چھوٹا شیطان) کو سات کنکریاں ماریں‘پھر اس کے پاس کچھ دیر قبلہ رخ کھڑے ہوکر دعا مانگیں۔ پھر جمرئہ وسطیٰ (درمیانہ شیطان) کو سات کنکریاں ماریں اور دعا مانگیں۔پھر جمرہٴ عقبہ (بڑا شیطان) کو سات کنکریاں ماریں، لیکن اس کے پاس نہ کھڑے ہو اور نہ دعا مانگیں۔ اس دن رمی کا سنت وقت زوال سے غروب آفتاب سے پہلے تک ہے، جب کہ اس کا جائز وقت زوال سے صبح صادق طلوع ہونے سے پہلے تک ہے ۔ رمی سے فارغ ہوکرمنیٰ واپس آجائیں۔

تینوں جمرات کی رمی :اس دن بھی زوال کے بعد غروب آفتاب سے پہلے تینوں جمرات کی رمی کریں، جس طرح گزشتہ روز11 ذو الحجہ کو تینوں جمرات کی رمی کی تھی۔

ذوالحجہ کومنیٰ رکنے اور مکہ جانے کا اختیار 13

رکنا یا جانا:12 ذوالحجہ کوجمرات کی رمی سے فارغ ہونے کے بعد حاجی کو اختیار ہے کہ مکہ چلا جائے۔اور اگر وہ مکہ نہیں جاتا اور واپس منیٰ چلا جاتا ہے تو اب اس کے ذمے 13 ذوالحجہ کو بھی زوال کے بعد تینوں جمرا ت کی رمی کرنا لازم ہے(اگر طلوع آفتاب کے بعد زوال سے پہلے رمی کرلے تو بھی جائز ہے)۔ افضل یہی ہے کہ حاجی 13 ذوالحجہ کو بھی منیٰ میں ٹھہرے اور تینوں جمرات کی رمی کر کے پھر مکہ واپس جائے۔اس لیے کہ احادیث میں مذکور ہے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم حجة الوداع کے موقع پر 12 ذوالحجہ کو جمرات کی رمی کے بعد منیٰ واپس گئے اور پھر13ذوالحجہ کو زوال کے بعد تینوں جمرات کی رمی کی اور پھر مکہ روانہ ہوئے۔

مندرجہ بالا افعال و مناسک اداکرنے کے بعد آپ کا حج پایہ تکمیل تک پہنچ گیا۔ البتہ ایک طواف رہ گیا جس کا وقت مکہ مکرمہ سے رخصت ہونے کا ہے۔اس کو طوافِ وداع کہا جاتا ہے۔ اس طواف کی شرعی حیثیت واجب کی ہے اور اس کا طریقہ عام نفل طواف کی طرح ہے، یعنی نہ اس میں رمل ہوگا اور نہ ہی اس کے بعد صفا اور مروہ کی سعی ہوگی، البتہ طواف کے دو نفل ضروری ہیں۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص حج کو جائے اور راستہ میں انتقال کرجائے، اس کے لئے قیامت تک حج کا ثواب لکھا جائے گا اور جو شخص عمرہ کے لئے جائے اور راستہ میں انتقال کرجائے تو اس کو قیامت تک عمرہ کا ثواب ملتا رہے گا۔ ابن ماجہ

حجتمام عبادتوں کا مجموعہ ہے۔جس نے تمام عبادات کی اصل اساسات اپنے اندر جمع کر لی ہیں۔ خانہ کعبہ ہماری نمازوں کا مرکز ہے۔ وہ سب سے پہلی مسجد ہے،جو اسی مقصد کے لیے بنائی گئی۔ قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ کاارشاد ہے: میں نے ابراہیم اور ان کی ذریت کو مکہ میں اسی لیے بسایا تھا کہ وہ میرا یہ گھر طواف، قیام اور رکوع کرنے والوں کے لیے پاک رکھیں۔ حج کے لیے، اسی گھر کاقصد کیا جاتا ہے۔ نماز کا مقصد قرآن مجید میں ’اللہ کی یاد‘ بیان ہواہے اورطواف اسی نماز کی وہ صورت ہے، جو صرف خانہ کعبہ کی حاضری ہی میں ادا کی جاتی ہے۔ اس نماز میں شمع و پروانہ کی حکایت کو دہرایا جاتا ہے۔ خدا کے بندے اپنے پروردگار کو پکارتے ہوئے، اس کے گھر کے گرد پروانوں کی طرح گھومتے ہیں۔ زکوٰۃ، خدا کی راہ میں خرچ کرنے کی عبادت ہے۔ حج کا اہتمام اور اس کے زاد راہ کے انتظام میں آدمی جو کچھ خرچ کرتا ہے، وہ اسی جذبے کی تسکین ہے، بلکہ عام آدمی تو اپنے روزمرہ کے اخراجات کم کر کے ہی حج کے مصارف پورے کرنے کا متحمل ہو پاتاہے۔ اس اعتبار سے اس کا جذبۂ انفاق اور بھی زیادہ گہرا ہوتا ہے۔ روزے کا مقصد تقوٰی کی آب یاری ہے۔یہ اللہ کی طرف بڑھنے، دنیوی خواہشات ترک کرنے اور اللہ کے ساتھ لو لگانے کی عبادت ہے۔ حج، یہ غرض بھی بتمام و کمال پوری کرتا ہے۔ آدمی اپنی ضروریات روک کر حج کے اخراجات کا بندوبست کرتا اور اپنے معاملات و علائق چھوڑ کر اللہ کے گھر کے لیے عازم سفر ہوتاہے۔ اسی طرح ہجرت و جہاد کی عبادت بھی معصیت کی زندگی سے نکلنے اور خدا کی راہ میں سرگرم ہو جانے کے جذبے کا نام ہے۔ حج میں بھی آدمی اپنے پروردگار کے لیے گھر بارچھوڑتا اور حج کے دنوں میں ایک مجاہد کی طرح کبھی پڑاؤ اور کبھی سفر کے مراحل سے گزرتا ہے اور ان میں پیش آنے والی صعوبتیں برداشت کرتاہے۔

حج کے حوالے سے ایک اہم مسئلہ یہ ہے کہ آیا کسی اور کی طرف سے حج کیا جاسکتا ہے یا نہیں؟اگر کیا جاسکتا ہے تواس کے احکام کیا ہیں؟اس حوالے سے یہ نوٹ کرلیں کہ اگر کسی شخص میں حج کی فرضیت کی تمام شرائط پائی جائیں، لیکن اس میں حج کی ادائیگی کی کوئی ایک شرط نہ پائی جائے تو اس صورت میں یہ شخص اپنی طرف سے کسی اور کو حج کے لیے بھیج سکتا ہے ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ حج خالص بدنی عبادت نہیں‘ بلکہ مالی اور بدنی عبادات کا مجموعہ ہے، اس لیے اس میں کسی دوسرے کی نیابت مجبوری کی حالت میں جائز ہے۔ البتہ نماز اور روزہچوں کہ خالص بدنی عبادات ہیں، اس لیے ان میں کسی کی نیابت مجبوری کی حالت میں بھی جائز نہیں ہے، یعنی نماز یا روزہ کسی کی طرف سے ادانہیں کیا جاسکتا۔

کسی دوسرے کی طرف سے حج کرنے کو فقہی اصطلاح میں حج بدل کہا جاتا ہے ۔حج بدل کے بارے میں چند احکام ملاحظہ ہوں

کوئی نابالغ کسی کی طرف سے حج نہیں کر سکتا۔

جس شخص نے اپنا فرض حج ادا نہیں کیا، اس کا حج بدل کے لیے جانا مکروہ ہے۔

 

جس شخص کی طرف سے حج کیا جا رہا ہے، اس کے ذمے سے فرض حج ادا ہوجائے گا۔

جس شخص پر حج فرض ہو اور وہ فوت ہوجائے۔پھر وہ اتنا ما ل چھوڑے کہ اس کے تیسرے حصہ سے حج ادا ہوسکے اور وہ حج کرنے کی وصیت بھی کرے تو وارثوں پر اس میت کی طرف سے حج کرنا فرض ہے۔

جس شخص پر حج فرض تھااور وہ فوت ہوگیا، مگر اس نے اتنا ما ل نہیں چھوڑا یا اس نے حج کرنے کی وصیت نہیں کی تو اس کی طرف سے وارثوں پرحج کرنا فرض نہیں ہے‘لیکن اگر وارث اس کی طرف سے حج کرے تو اللہ تعالیٰ کی رحمت سے امید ہے کہ اس میت کا فرض حج ادا ہوجائے گا۔

جس شخص پر حج فرض نہیں تھا ‘اگر اس کا وارث اس کی طرف سے حج کرے تو مرحوم کو اس حج کا ثواب ان شاء اللہ ضرور پہنچے گا۔

اگر کوئی اتنا بیمار ہے کہ حج کونہیں جا سکتا یا معذور ہے اور اسے اپنے ٹھیک ہونے کی امیدبھی نہیں ہے تو وہ اپنی زندگی میں ہی کسی سے حج کراسکتا ہے۔

اگر کسی عورت میں حج کی فرضیت کی تمام شرائط پائی جاتی ہیں، لیکن اس کے ساتھ حج پر جانے کے لیے شوہر یا محرم نہ ہو تو اس کو چاہیے کہ مرنے سے پہلے حج کی وصیت کرے یا اگر اسے محرم ملنے کا امکان نہ ہو تو اس کے لیے جائز ہے کہ وہ اپنی زندگی میں ہی کسی سے حج بدل کرائے۔

اگر انسان صاحب استطاعت ہو تو اسے اپنے مرحوم والدین کی طرف سے حج بدل ضرور کرنا یا کسی سے کروانا چاہیے

عمرہ کی حیثیت چوں کہ نفل کی ہے، اس لیے عمرہ کسی کا نام لے کر بھی کیا جاسکتا ہے اور اس کا ثواب بھی کسی کو پہنچایا جاسکتا ہے۔اس میں حج بدل کی طرح مجبوری بھی شرط نہیں ہے۔

:کعبہ

کعبہ، یا خانہ کعبہ ، قبلہ ، یا بیت اللہ ، اللہ کا گھر جس کا حج اور طواف کرتے ہیں ، ساری دنیا کے مسلمان جس کی طرف کو منہ کرکے نماز پڑھتے ہیں،اور جس مسجد میں یہ گھر واقع ہے اس کو مسجد حرام یا حرم شریف کہتے ہیں۔

:رکن یمانی

کعبہ کا جنوب مغربی کونہ جو یمن کی طرف واقع ہے ۔

:حجر اسود

کالا پتھر جو جنت سے آیا ہو ہے ، اس کا رنگ دودھ کی طرح سفید تھا ،لیکن بنی آدم کے گناہوں نے اس کو سیاہ کر دیا ، یہ بیت اللہ کے جنو ب مشرقی کونے میں چاندی کے حلقہ میں پیوست کر کے لگایا ہوا ہے ۔

:ملتزم

حجرے اسود اور بیت اللہ کے دروازے کے ما بین دیوار جس پر لپٹ کر دعا مانگنا مسنون ہے ۔

:حطیم

خانہ کعبہ کی شمالی جانب زمین کا وہ حصہ ہے جو چھوٹی دیوار سے باونڈری کی ہو ئی ہے جس کے اندر سے گزر کرطواف نہیں کیا جا سکتا ہے اور اس کے اندر نماز پڑھنا کعبہ کے اندر نماز پڑھنے کے مساوی ہے ۔

:میزاب رحمت

حطیم کے اندر کعبہ کے اوپر سے گرنے والا پر نالہ جہاں دعا قبول ہوتی ہے۔

:مقام ابراہیم

یہ جنت سے آیا ہوا وہ پتھر جس کے اوپر کھڑے ہو کر حضرت ابراہیم علیہ السلام نے کعبہ کی تعمیر کی تھی ۔اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں اس کا ذکر یوں فرمایا ہے

واتخذو من مقامِ ابراھیم مصلیٰ : البقر

:مطاف

کعبہ کے چاروں طرف کی جگہ جہاں طواف کیا جاتا ہے ۔

حرم شریف کے اندر پانی کا کنواں جس کا پانی پینا ثواب اور بہت سی بیماریوں کے لئے باعث شفا ہے۔ حضرت جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا: زمزم کا پانی جس نیت سے پیا جائے وہی فائدہ اس سے حاصل ہوتا ہے۔ ابن ماجہ

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: روئے زمین پر سب سے بہتر پانی زمزم ہے جو بھوکے کے لئے کھانا اور بیمار کے لئے شفا ہے۔ طبرانی

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا زمزم کا پانی (مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ ) لے جایا کرتی تھیں اور فرماتیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی لے جایا کرتے تھے

صفا و مروہ دو پھاڑ ہیں جن کے درمیان حضرت حاجرہ رحمت الله الیہ سات مرتبہ پانی کی تلاش میں سرگداں ہوئیںھیں تا کہ اپنے بیٹے حضرت اسماعیل عالیہ سلام کی پیاس بھجا سکیں۔وہ حضرت ابراہیم ( A.S ) کی بیوی تھیں۔ تمام لوگ جو یہاں حج یا عمرہ کرنے آتے ہیں اسہی طرحسات بار دوڑتے ہیں، یہ عمل سعیٰ کہلاتا ہے۔١٠٦٩ ھ تک چونکے مسجد الحرام میں کوئی اضافہ اور توسیع نہیں کی گئی تھی. اس لئے اس پاس کی مکّہ کی آبادیاں مسجد الحرام کے ساتھ آ کر مل گئی تھیں اور مسعیٰ کے دونوں جانب تعمیرات ہونے سے یہ حصّہ الگ تھلگ ہوگیا تھا اور قریب ہی رہائشی مکان اور بازار ہونے کی وجہ سے خریدو فروخت کی باعث سعیٰ کرنے والوں کے لئے رکاوٹ پیدا ہوتی تھی

جب حضرت ابراہیم عليه السلام حضرت هاجره ور اپنے بیٹے حضرت اسماعیل عليه السلام کو مکّہ کی وادی میں تنہا الله پاک کے بھروسے چھوڑ کر چلے گئے تو حضرت هاجره اور ان کے بیٹے حضرت اسماعیل عليه السلام کو بہت مشکلات درپیش آئین اور جب حضرت اسماعیل عليه السلام پیاس سے نڈھال ہوگیئے تو حضرت هاجره نے انھیں ایک جگہ زمین پی ڈالا اور خود ایک پہاڑ پہچڑہیںاور ادھر اُدھر نگاہدوڑایئجب بچہ نظر سے اوجھل ہُوا تو درمیان سے پِھر چوٹی پہ گئیں اور ایک نگاہ بّچے پہ ڈالی پِھر وہاں سے مروا کی طرف دور لگائی اِس طرح 7 چکر صفا اور مروا کے درمیان لگائے آخر تھک کر وہیں بیٹھ گئیں اور حمت جواب دے گئی تو سوچا کہ اب تبھی واپس جاؤنگی جب بچہ جان دے دیگا کے نظروں کے سامنے اسے بھوکا مرتا نہیں دیکھ سکتی تھیں کہ اچانک دور سے ایک سفید رنگ کے کپڑوں میں بزرگ نظر آئے جو بچے کی طرف آرہے تھے تو پِھر ساری ہمت کو مجتمع کیا اور واپس بھاگیں ۔ جب نیچے تو کیا دیکھتی ہیں کہجہاں بچے ہے وہاں سے ایک چشمہ جاری ہو گیا اور بزرگ اوجھلہوگےئتھے۔ حضرت ھاجرہ نے کہا زم زم، زم زم (ا مطلب رک جا ،رک جا ) تو چشمہ رک گیا . نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں :اللہ رحم کرے اسماعیل عليه السلامکی ماں پر ورنہ اگر وہ زم زم نا کہتیں تو پورے عرب میں دریا جاری ہوجانا تھا آپ نے وہ پانی خود بھی پیا اور بچے کو بھی پلایا اور اللہ پاک کا شکر ادا کیا

یہ بات بالکل واضح ہے کہ حج مکہ مکرمہ میں ہی پورا ہوجاتا ہے ۔ لیکن جس شخص کو اللہ تعالٰی نے حج کی عظیم سعادت نصیب فرمائی ہو تو وہ مدینہ نبویہ کی زیارت سے کیوں محروم رہے ۔ یہ اللہ کے پیارے رسولؐ کا شہر ہے جہاں کے لوگوں نے آپ ؐکا گرم جوشی اور تہہ دل سے استقبال کیا آپؐ پر اپنا جان و مال سب کچھ قربان کردیا اور یہاں سے ہی اسلامی فتوحات اور اسلام کی نشر واشاعت کی شروعات ہوئیں ۔ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس شہر کی محبت کے لئے دعا فرمائی

(اَللّٰھُمَّ حَبِّبْ إِلَیْنَا الْمَدِیْنَۃِ کَحُبِّنَا مَکَّۃ اَوْ اَشَدُّ (متفق علیہ

توفیق ہو تو مسجد نبوی کی زیارت کی نیت کریں ۔

آپ ؐ نے فرمایا

(لا تَشُدُ الرِحال إلاإلی ثَلاثَة مَساجِد ، المسجد الحرام ، ومسجدي ھذا ، والمسجد الأقصی (متفق علیہ

ترجمہ آپ ؐ نے فر مایا : (کہ دینی ہدف کےلئے) سفر تین مسجدوں کے علاوہ کہیں کا نہ کیا جائے

مسجدحرام ، اور یہ میری مسجد ، اور مسجد اقصٰی ۔

مدینہ منورہ کے دوران قیام جہاں تک ممکن ہو ساری نمازیں باجماعت اور تمام سنتیں اور نوافل مسجد نبوی میں ادا کریں اس کی بڑی فضیلت ہے ۔ آپ ؐ نے فرمایا ۔

صَلاة فی مَسجدی ھَذا أفضل مِن ألف صَلاة فِیما سِواہ الا المسجد الحرام و صلاة فی المسجد الحرام افضل من مائة ألف صلاة فیما سواہ متفق علیہ

ترجمہ : میری اس مسجد میں نماز پڑھنا مسجد حرام کے علاوہ تمام مساجد سے ایک ہزار گنا زیادہ ہے ۔

نبی اکر مؐکی قبرکی زیارت کریں انتہائی ادب واحترام کے ساتھ دھیمی آواز میں سلام کہیں اور درود پڑھیں۔

(إِنَّ اللہ وَمَلائکتہ یُصلون عَلی النَّبی یا آیھا الذین آمنو صَلواعَلیہ وَسَلمِّوا تَسلِیما ( سورة الاحزاب آیة ۵

ترجمہ: اللہ اور اس کے فرشتے نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر سلام بھیجتے ہیں اے ایمان والوں نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر سلام بھیجو۔

آپ نے فرمایا

من صلی علی صلاة واحدة صلی اللہ علیہ بھا عشر امام مسلم

ترجمہ: جس نے مجھ پر ایک بار سلام بھیجا اللہ تعالیٰ نے ا س پر دس بار سلام بھیجا۔

اس کے بعد ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ پر سلام پڑھیں اور پھر سیدنا عمر بن خطاب پر سلام پڑھیں۔

اس جگہ کی فضیلت کے بارے میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

(ما بین بیتی و منبری روضہ من ریاض الجنةء (متفق علیہ

آپ نے فرمایا: میرے منبر اور میرے گھر کے درمیان والی جگہ جنت کے باغیچوں میں سے ایک باغیچہ ہے۔

مدینہ سے واپسی میں دو رکعت نماز نفل پڑھنی چاہیۓ اور الله پاک کا شکرانہ ادا کرنا چاہیے کہ اس نے ہمیں اپنے گھر اور اپنے محبوبؐ کےگھر کی زیارت کا موقع دیا. اس کے علاوہ دوبارہ حج یا عمرہ کرنے کی دعا بھی کرنی چاہیے اور دعا میں اپنے لئے خیر و عافیت مانگ کر اپنی منزل لوٹ جانا چاہیے

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۸
ذو الحجہ

میقات سے احرام باندھنا: ۸ ذو الحجہ کو نمازِ فجرمکہ میں باجماعت ادا کریں اور غسل یا وضو کر کے میقات جا کر احرام باندھ لیں۔ اس کے بعد احرام کے دو رکعت نفل ادا کریں۔سعی ارکان حج میں سے ایک رکن ہے لہذا اگر کوئی مسئلہ نہ جانتے ہوئے یا خود سعی کے بارے میں علم نہ رکھنے کی وجہ سے جان بوجھ کر سعی کو اس وقت تک ترک کردے کہ اعمال عمرہ کو عرفہ کے دن زوال آفتاب سے پہلے تک انجام دینا ممکن نہ ہو تو اس کا حج باطل ہے۔

حج کی نیت کرنا اور تلبیہ پڑھنا: احرام کے نفل سے فارغ ہو کر حج کی نیت کریں اور یہ دعا پڑھیں: اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اُرِیْدُ الْحَجَّ فَیَسِّرْہُ لِیْ وَتَقَبَّلْہُ مِنِّیْ ”اے اللہ! میں حج کی نیت کرتا ہوں کرتی ہوں، اس کو میرے لیے آسان فرما اور اسے میری طرف سے قبول فرما“۔اس کے بعد تلبیہ پڑھیں اور دعا کریں ۔اب احرام کی پابندیاں شروع ہو گئیں۔

منیٰ روانگی اوروقوفِ منیٰ :طلوعِ آفتاب کے بعد منیٰ روانہ ہو جائیں۔ ۸ ذوالحجہ کی ظہر‘ عصر‘ مغرب اورعشا کی نمازیں منیٰ میں باجماعت ادا کریں

نوٹ:اگرکوئی شخص ۸ ذوالحجہ کو منیٰ نہیں جاتا اور مکہ مکرمہ میں ہی رہتا ہے اور یہی سے۹ذوالحجہ کو عرفات کے لیے روانہ ہوجاتا ہے تو اس طرح کرنے سے مناسک حج کے حوالے سے تو کوئی خرابی لازم نہیںآ تی، اس لیے کہ8ذوالحجہ کو منیٰ میں حج کا کوئی مناسک ادا نہیں ہوتا، البتہ ا س طرح کرنے سے نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کی سنت کی خلاف ورزی ہوگی اور یہ شخص اس کی وجہ سے گناہ گار ہوگا۔اس لیے افضل یہی ہے کہ سنت نبوی کی پاس داری کرتے ہوئے ۸ ذوالحجہ کو منیٰ جائیں اور اگلے دن یہیں سے عرفات کے لیے روانہ ہوں۔

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۹
ذو الحجہ

مزدلفہ میں نمازِ فجر ادا کرنا:وقوفِ مزدلفہ کی رات دعاوٴں میں مشغول ہو کر گزارنے کے بعد فجر کی نماز اول وقت میں باجماعت ادا کریں۔ پھر سورج نکلنے تک ذکر و اذکار ‘دعا و استغفاراور تلبیہ میں مشغول رہتے ہوئے وہیں وقوف کریں۔

نوٹ:مزدلفہ میں جبل قُزح کے قریب وقوف کریں، اس لیے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے بھی اسی پہاڑ کے قریب وقوف کیا تھا۔

مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھانااس دوران مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھائیں، جو جمرات کو مارنے کے لیے استعمال کی جا ئیں گی۔ہر حاجی چنے یا کھجور کی گٹھلی کے برابر ستر کنکریاں مزدلفہ سے اٹھا ئے۔

منیٰ روانگی اور جمرئہ عقبہ( بڑے شیطان )کی رمی:طلوعِ آفتاب کے وقت منیٰ روانہ ہو جائیں اور منیٰ پہنچ کر سب سے پہلے جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی کیجیے۔ ۱۰ ذو الحجہ کو صرف بڑے شیطان کی رمی کی جاتی ہے ۔ اس دن رمی کا افضل وقت طلوعِ آفتاب سے زوال تک ہے، لیکن اس کا جائز وقت 10 ذوالحجہ کے طلوعِ آفتاب سے لے کر اگلے دن 11ذوالحجہ کے صبح صادق طلوع ہونے سے پہلے تک ہے۔

رمی کا طریقہ:۱۰ ذوالحجہ کو صرف بڑے شیطان کی، جب کہ اگلے دونوں دن تینوں جمرات کی رمی کی جاتی ہے، اس لیے ضروری معلوم ہوتا ہے کہ رمی کا سنت طریقہ بھی ذکر کر دیا جائے۔

رمی کا طریقہ یہ ہے کہ سات کنکریاں ہاتھ میں لے کر اس طرح کھڑے ہوں کہ منیٰ آپ کے دائیں جانب اور مکہ مکرمہ بائیں جانب ہو۔ دائیں ہاتھ کے انگوٹھے اور شہادت کی انگلی سے پکڑ کر ایک ایک کنکری ستون پر مارتے جائیں( کنکر کا احاطے میں گرنا کافی ہے‘ستون کو لگنا ضروری نہیں)۔ ہر کنکری مارتے وقت ”بسم اللّٰہ اللّٰہ اکبر“ کہیں اور یہ دعا پڑھیں

اَللّٰھُمَّ اجْعَلْہُ حَجًّا مَبْرُوْرًا وَذَنْبًا مَغْفُوْرًا

”اے اللہ! میرے حج کو قبول فرما اور میرے گناہوں کو بخش دے۔“

نوٹ:رمی کے دوران تلبیہ پڑھنا بند کر دیں اور جمرہٴ عقبہ (بڑے شیطان)کی رمی کے بعداُس کے پاس کھڑے ہوکر دعا نہ مانگیں۔

قربانی کرنارمی کے بعد قربانی کیجیے۔قربانی کرنا واجب ہے۔اس قربانی کے لیے تین دن ‘یعنی ۱۰‘۱۱‘۱۲ ذو الحجہ مقرر ہیں۔ ان دنوں میں جب چاہیں قربانی کر لیجیے، جب کہ پہلے دن قربانی کرنا افضل ہے۔

حلق یا قصر کرواناقربانی کرنے کے بعد مرد پورے سر کے بال منڈوائیں یاپورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کاٹیں ‘مگر منڈوانا افضل ہے۔ خواتین پورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کتروائیں ۔ تاہم چوتھائی سر کے بال کٹ جانے کا اطمینان ضرورکرلیں۔ حلق یا قصر کی شرعی حیثیت فرض کی ہے اور اس کے بعد سوائے ازدواجی تعلق قائم کرنے کے احرام کی باقی تمام پابندیاں ختم ہو جاتی ہیں۔

نوٹماقبل ۱۰ ذوالحجہ کے جوتین مناسک:جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی۔ قربانی اور حلق یا قصرذکر کیے ہیں، ان کو اسی ترتیب سے ادا کرنا واجب ہے ۔اگر کسی نے اس ترتیب کے اُلٹ کیا تو اس پر دم لازم ہو گا۔

طوافِ زیارت:حلق یا قصر کے بعد غسل کیجیےپھر سلے ہوئے کپڑے پہن کر یا احرام ہی کی چادروں میں مکہ جا کر طواف کیجیے۔ اس کا وقت حلق سے فارغ ہونے کے بعد 12ذو الحجہ کے غروب آفتاب تک ہے۔ افضل یہی ہے کہ ۱۰ ذو الحجہ ہی کو کر لیا جائے‘ ورنہ 12ذو الحجہ تک کبھی بھی کیا جاسکتا ہے۔ طوافِ زیارت کی شرعی حیثیت فرض کی ہے۔

صفا و مروہ کی سعی طوافِ زیارت اور دو رکعت نمازِ طواف سے فارغ ہو کر صفا و مروہ کی سعی کریں ۔ صفا مروہ کی سعی کرنا واجب ہے۔

نوٹاگر حاجی نے مکہ آنے کے بعد طواف قدوم(یعنی استقبالی طواف)کیا اور اس طواف میں رمل (طواف کے پہلے تین چکروں میں اکڑکر چلنا)بھی کیا اور اس کے بعد صفا ومروہ کی سعی بھی کی تو اب اس حاجی کے لیے طواف زیارت میں نہ تو رمل ہے اور نہ اس پر سعی واجب ہے۔ اور اگر حاجی نے مکہ آنے کے بعد طواف قدوم نہیں کیا تو اب وہ طواف زیارت میں رمل بھی کرے گا اور اس کے بعد سعی کرنا بھی اس پر واجب ہے۔

منیٰ واپسی۱۰ ذوالحجہ کو مندرجہ بالا تمام افعال و مناسک کی ادائیگی کے بعد منیٰ واپس آجائیں اور رات منیٰ میں ہی گزاریں۔

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۱۰
ذو الحجہ

مزدلفہ میں نمازِ فجر ادا کرنا:وقوفِ مزدلفہ کی رات دعاوٴں میں مشغول ہو کر گزارنے کے بعد فجر کی نماز اول وقت میں باجماعت ادا کریں۔ پھر سورج نکلنے تک ذکر و اذکار ‘دعا و استغفاراور تلبیہ میں مشغول رہتے ہوئے وہیں وقوف کریں۔

نوٹ:مزدلفہ میں جبل قُزح کے قریب وقوف کریں، اس لیے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے بھی اسی پہاڑ کے قریب وقوف کیا تھا۔

مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھانااس دوران مزدلفہ سے کنکریاں اُٹھائیں، جو جمرات کو مارنے کے لیے استعمال کی جا ئیں گی۔ہر حاجی چنے یا کھجور کی گٹھلی کے برابر ستر کنکریاں مزدلفہ سے اٹھا ئے۔

منیٰ روانگی اور جمرئہ عقبہ( بڑے شیطان )کی رمی:طلوعِ آفتاب کے وقت منیٰ روانہ ہو جائیں اور منیٰ پہنچ کر سب سے پہلے جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی کیجیے۔ ۱۰ ذو الحجہ کو صرف بڑے شیطان کی رمی کی جاتی ہے ۔ اس دن رمی کا افضل وقت طلوعِ آفتاب سے زوال تک ہے، لیکن اس کا جائز وقت 10 ذوالحجہ کے طلوعِ آفتاب سے لے کر اگلے دن 11ذوالحجہ کے صبح صادق طلوع ہونے سے پہلے تک ہے۔

رمی کا طریقہ:۱۰ ذوالحجہ کو صرف بڑے شیطان کی، جب کہ اگلے دونوں دن تینوں جمرات کی رمی کی جاتی ہے، اس لیے ضروری معلوم ہوتا ہے کہ رمی کا سنت طریقہ بھی ذکر کر دیا جائے۔

رمی کا طریقہ یہ ہے کہ سات کنکریاں ہاتھ میں لے کر اس طرح کھڑے ہوں کہ منیٰ آپ کے دائیں جانب اور مکہ مکرمہ بائیں جانب ہو۔ دائیں ہاتھ کے انگوٹھے اور شہادت کی انگلی سے پکڑ کر ایک ایک کنکری ستون پر مارتے جائیں( کنکر کا احاطے میں گرنا کافی ہے‘ستون کو لگنا ضروری نہیں)۔ ہر کنکری مارتے وقت ”بسم اللّٰہ اللّٰہ اکبر“ کہیں اور یہ دعا پڑھیں

اَللّٰھُمَّ اجْعَلْہُ حَجًّا مَبْرُوْرًا وَذَنْبًا مَغْفُوْرًا

”اے اللہ! میرے حج کو قبول فرما اور میرے گناہوں کو بخش دے۔“

نوٹ:رمی کے دوران تلبیہ پڑھنا بند کر دیں اور جمرہٴ عقبہ (بڑے شیطان)کی رمی کے بعداُس کے پاس کھڑے ہوکر دعا نہ مانگیں۔

قربانی کرنارمی کے بعد قربانی کیجیے۔قربانی کرنا واجب ہے۔اس قربانی کے لیے تین دن ‘یعنی ۱۰‘۱۱‘۱۲ ذو الحجہ مقرر ہیں۔ ان دنوں میں جب چاہیں قربانی کر لیجیے، جب کہ پہلے دن قربانی کرنا افضل ہے۔

حلق یا قصر کرواناقربانی کرنے کے بعد مرد پورے سر کے بال منڈوائیں یاپورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کاٹیں ‘مگر منڈوانا افضل ہے۔ خواتین پورے سر کے بال انگلی کے پور سے کچھ زیادہ کتروائیں ۔ تاہم چوتھائی سر کے بال کٹ جانے کا اطمینان ضرورکرلیں۔ حلق یا قصر کی شرعی حیثیت فرض کی ہے اور اس کے بعد سوائے ازدواجی تعلق قائم کرنے کے احرام کی باقی تمام پابندیاں ختم ہو جاتی ہیں۔

نوٹماقبل ۱۰ ذوالحجہ کے جوتین مناسک:جمرئہ عقبہ (بڑے شیطان) کی رمی۔ قربانی اور حلق یا قصرذکر کیے ہیں، ان کو اسی ترتیب سے ادا کرنا واجب ہے ۔اگر کسی نے اس ترتیب کے اُلٹ کیا تو اس پر دم لازم ہو گا۔

طوافِ زیارت:حلق یا قصر کے بعد غسل کیجیےپھر سلے ہوئے کپڑے پہن کر یا احرام ہی کی چادروں میں مکہ جا کر طواف کیجیے۔ اس کا وقت حلق سے فارغ ہونے کے بعد 12ذو الحجہ کے غروب آفتاب تک ہے۔ افضل یہی ہے کہ ۱۰ ذو الحجہ ہی کو کر لیا جائے‘ ورنہ 12ذو الحجہ تک کبھی بھی کیا جاسکتا ہے۔ طوافِ زیارت کی شرعی حیثیت فرض کی ہے۔

صفا و مروہ کی سعی طوافِ زیارت اور دو رکعت نمازِ طواف سے فارغ ہو کر صفا و مروہ کی سعی کریں ۔ صفا مروہ کی سعی کرنا واجب ہے۔

نوٹاگر حاجی نے مکہ آنے کے بعد طواف قدوم(یعنی استقبالی طواف)کیا اور اس طواف میں رمل (طواف کے پہلے تین چکروں میں اکڑکر چلنا)بھی کیا اور اس کے بعد صفا ومروہ کی سعی بھی کی تو اب اس حاجی کے لیے طواف زیارت میں نہ تو رمل ہے اور نہ اس پر سعی واجب ہے۔ اور اگر حاجی نے مکہ آنے کے بعد طواف قدوم نہیں کیا تو اب وہ طواف زیارت میں رمل بھی کرے گا اور اس کے بعد سعی کرنا بھی اس پر واجب ہے۔

منیٰ واپسی۱۰ ذوالحجہ کو مندرجہ بالا تمام افعال و مناسک کی ادائیگی کے بعد منیٰ واپس آجائیں اور رات منیٰ میں ہی گزاریں۔

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۱۱
ذو الحجہ

تینوں جمرات کی رمی :۱۱ ذو الحجہ کو زوال کے بعد تینوں جمرات کی رمی کریں، بایں طور کہ پہلے جمرئہ اولیٰ (چھوٹا شیطان) کو سات کنکریاں ماریں‘پھر اس کے پاس کچھ دیر قبلہ رخ کھڑے ہوکر دعا مانگیں۔ پھر جمرئہ وسطیٰ (درمیانہ شیطان) کو سات کنکریاں ماریں اور دعا مانگیں۔پھر جمرہٴ عقبہ (بڑا شیطان) کو سات کنکریاں ماریں، لیکن اس کے پاس نہ کھڑے ہو اور نہ دعا مانگیں۔ اس دن رمی کا سنت وقت زوال سے غروب آفتاب سے پہلے تک ہے، جب کہ اس کا جائز وقت زوال سے صبح صادق طلوع ہونے سے پہلے تک ہے ۔ رمی سے فارغ ہوکرمنیٰ واپس آجائیں۔

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۱۲
ذو الحجہ

تینوں جمرات کی رمی :اس دن بھی زوال کے بعد غروب آفتاب سے پہلے تینوں جمرات کی رمی کریں، جس طرح گزشتہ روز11 ذو الحجہ کو تینوں جمرات کی رمی کی تھی۔

ذوالحجہ کومنیٰ رکنے اور مکہ جانے کا اختیار ۱۳

رکنا یا جانا:۱۲ ذوالحجہ کوجمرات کی رمی سے فارغ ہونے کے بعد حاجی کو اختیار ہے کہ مکہ چلا جائے۔اور اگر وہ مکہ نہیں جاتا اور واپس منیٰ چلا جاتا ہے تو اب اس کے ذمے ۱۳ ذوالحجہ کو بھی زوال کے بعد تینوں جمرا ت کی رمی کرنا لازم ہے(اگر طلوع آفتاب کے بعد زوال سے پہلے رمی کرلے تو بھی جائز ہے)۔ افضل یہی ہے کہ حاجی ۱۳ ذوالحجہ کو بھی منیٰ میں ٹھہرے اور تینوں جمرات کی رمی کر کے پھر مکہ واپس جائے۔اس لیے کہ احادیث میں مذکور ہے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم حجة الوداع کے موقع پر ۱۲ ذوالحجہ کو جمرات کی رمی کے بعد منیٰ واپس گئے اور پھر ۱۳ ذوالحجہ کو زوال کے بعد تینوں جمرات کی رمی کی اور پھر مکہ روانہ ہوئے۔

مکہ واپسی پر وادیٴ محصب میں جانا

۱۲یا۱۳ ذوالحجہ کو جب حاجی مکہ کی طرف واپسی کا کوچ کرے تو اس کو چاہیے کہ منیٰ اور مکہ کے درمیان وادیٴ محصب میں کچھ دیر قیام کرے، اس لیے کہ نبی اکرمصلی الله علیہ وسلم نے اس جگہ پر کچھ دیر قیام کیا تھا۔یہاں کچھ دیر قیام کرنا سنت ہے۔

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

۱۳
ذو الحجہ

مندرجہ بالا افعال و مناسک اداکرنے کے بعد آپ کا حج پایہ تکمیل تک پہنچ گیا۔ البتہ ایک طواف رہ گیا جس کا وقت مکہ مکرمہ سے رخصت ہونے کا ہے۔اس کو طوافِ وداع کہا جاتا ہے۔ اس طواف کی شرعی حیثیت واجب کی ہے اور اس کا طریقہ عام نفل طواف کی طرح ہے، یعنی نہ اس میں رمل ہوگا اور نہ ہی اس کے بعد صفا اور مروہ کی سعی ہوگی، البتہ طواف کے دو نفل ضروری ہیں۔

WE ARE NOW TAKING BOOKINGS FOR HAJJ 2022 - LIMITED PLACES!

CONTACT US TODAY FOR NO OBLIGATION TAILOR MADE QUOTE!

عن أبي هريرة (رضي الله عنه) أن رسول الله (صلى الله عليه وسلم) قال: (من حج لله فلم يرفث و لم يفسق رجع كيوم ولدته أمه). وهو الركن الخامس من أركان الإسلام الأساسية، ويمتاز بأنه جامع لما تضمنته الأركان الأخرى

 

البلوغ

الاستطاعة

الإسلام

الحرية

العقل

سلامة البدن

عدم الحبس

أمن الطريق

وجود المحرم أو الزوج للمرأة

عدم العدة عند للمرأة

الإسلام

البلوغ

العقل

مباشرة صحة الأفعال بنفسه إلا بعذر

الاحرام

المكان (ميقات الاحرام المكاني)

الزمان (ميقات الاحرام الزماني)

عدم الجماع

وهي ثلاثة

الإفراد: و هو نية الحج فقط

التمتع: و هو نية العمرة أولاً (أي يحرم بالعمرة من ميقات بلده و يفرغ منها ثم يحرم للحج من مكة). وسمي متمتعاً لاستمتاعه بمحظورات الإحرام بين العمرة و الحج

القِران: و هو نية الحج و العمرة معاً أي يحرم للحج و العمرة معاً

روى مسلم في صحيحه عن ابْنَ عُمَرَ أَنّ رَسُولَ اللّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ إِذَا اسْتَوَىَ عَلَىَ بَعِيرِهِ خَارِجاً إِلَىَ سَفَرٍ، كَبّرَ ثَلاَثاً، ثُمّ قَالَ: سُبْحَانَ الّذِي سَخّرَ لَنَا هَذَا وَمَا كُنّا لَهُ مُقْرِنِينَ* وَإِنّا إِلَىَ رَبّنَا لَمُنْقَلِبُونَ. اللّهُمّ إِنّا نَسْأَلُكَ فِي سَفَرِنَا هَذَا الْبِرّ وَالتّقْوَىَ. وَمِنَ الْعَمَلِ مَا تَرْضَىَ. اللّهُمّ هَوّنْ عَلَيْنَا سَفَرَنَا هَذَا. وَاطْوِ عَنّا بُعْدَهُ. اللّهُمّ أَنْتَ الصّاحِبُ فِي السّفَرِ. وَالْخَلِيفَةُ فِي الأَهْلِ. اللّهُمّ إِنّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ وَعْثَاءِ السّفَرِ، وَكَآبَةِ الْمَنْظَرِ، وَسُوءِ الْمُنْقَلَبِ، فِي الْمَالِ وَالأَهْلِ”. وَإِذَا رَجَعَ قَالَهُنّ وَزَادَ فِيهِنّ: “آيِبُونَ، تَائِبُونَ، عَابِدُونَ، لِرَبّنَا حَامِدُونَ”

 

إذا عزم المسلم على السفر الى الحج استحب له فعل الآتي

يوصي أهله وأصحابه بتقوى الله عز وجل وهي: فعل أوامره واجتناب نواهيه

ينبغي أن يكتب ما له وما عليه من الدين ويشهد على ذلك

يجب عليه المبادرة إلى التوبة النصوح من جميع الذنوب لقوله تعالى:{ وَتُوبُوا إِلَى اللَّهِ جَمِيعًا أَيُّهَا الْمُؤْمِنُونَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ} سورة النــور، وحقيقة التوبة الإقلاع من الذنوب وتركها والندم على ما مضى منها والعزيمة على عدم العود فيها

إن كان عنده للناس مظالم من نفس أو مال أو عرض ردها إليهم أو تحللهم منها قبل سفره لما صح عنه صلى الله عليه وسلم أنه قال “من كان عنده مظلمة لأخيه من مال أو عرض فليتحلل اليوم قبل أن لا يكون دينار ولا درهم ، إن كان له عمل صالح أخذ منه بقدر مظلمته وإن لم تكن له حسنات أخذ من سيئات صاحبه فحمل عليه

ينبغي أن ينتخب لحجه نفقة طيبة من مال حلال لما صح عنه صلى الله عليه وسلم أنه قال : “إن الله تعالى طيب لا يقبل إلا طيباً وروى الطبراني عن أبي هريرة رضي الله عنه قال : قال رسول الله صلى الله عليه وسلم “إذا خرج الرجل حاجاً بنفقة طيبة ووضع رجله في الغرز فنادى لبيك اللهم لبيك ناداه مناد من السماء لبيك وسعديك زادك حلال وراحلتك حلال وحجك مبرور غير مأزور وإذا خرج الرجل بالنفقة الخبيثة فوضع رجله في الغرز فنادى لبيك اللهم لبيك ناداه مناد من السماء لا لبيك ولا سعديك زادك حرام وراحلتك حرام ونفقتك حرام وحجك غير مبرور”

ينبغي للحاج الاستغناء عما في أيدي الناس والتعفف عن سؤالهم لقوله صلى الله عليه وسلم “ومن يستعفف يعفه الله ومن يستغن يغنه الله” وقوله صلى الله عليه وسلم “لا يزال الرجل يسأل الناس حتى يأتي يوم القيامة وليس في وجهه مزعة لحم”

يجب على الحاج أن يقصد بحجه وجه الله والدار الآخرة والتقرب إلى الله بما يرضيه من الأقوال والأعمال في تلك المواضع الشريفة ويحذر كل الحذر من أن يقصد بحجه الدنيا وحطامها والرياء و السمعة والمفاخرة بذلك فإن ذلك من أقبح المقاصد وسبب لحبوط العمل وعدم قبوله كما قال تعالى:{مَن كَانَ يُرِيدُ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا وَزِينَتَهَا نُوَفِّ إِلَيْهِمْ أَعْمَالَهُمْ فِيهَا وَهُمْ فِيهَا لاَ يُبْخَسُونَ أُوْلَئِكَ الَّذِينَ لَيْسَ لَهُمْ فِي الآخِرَةِ إِلاَّ النَّارُ وَحَبِطَ مَا صَنَعُواْ فِيهَا وَبَاطِلٌ مَّا كَانُواْ يَعْمَلُونَ} (15-16) سورة هود ، وقال تعالى: {مَّن كَانَ يُرِيدُ الْعَاجِلَةَ عَجَّلْنَا لَهُ فِيهَا مَا نَشَاء لِمَن نُّرِيدُ ثُمَّ جَعَلْنَا لَهُ جَهَنَّمَ يَصْلاهَا مَذْمُومًا مَّدْحُورًا ، وَمَنْ أَرَادَ الآخِرَةَ وَسَعَى لَهَا سَعْيَهَا وَهُوَ مُؤْمِنٌ فَأُولَئِكَ كَانَ سَعْيُهُم مَّشْكُورًا} (18-19) سورة الإسراء. وصح عنه صلى الله عليه وسلم أنه قال : “قال الله تعالى أنا أغنى الشركاء عن الشرك من عمل عملاً أشرك معي فيه غيري تركته وشركه”

ينبغي له أيضاً أن يصحب في سفره الأخيار من أهل الطاعة والتقوى والفقه في الدين ويحذر من صحبة السفهاء والفسّاق ، وينبغي له أن يتعلم ما يُشرع له في حجه وعمرته ويتفقه في ذلك ويسأل عما أشكل عليه ليكون على بصيرةٍ

يكثر في سفره من الذكر والاستغفار ودعاء الله سبحانه والتضرع إليه وتلاوة القرآن وتدبر معانيه

المحافظة على الصلوات في جماعة

يحفظ لسانه من كثرة القيل والقال والخوض في ما لا يعنيه والإفراط في المزاح

يصون لسانه أيضاً من الكذب والغيبة والنميمة والسخرية بأصحابه وغيرهم من إخوانه المسلمين

ينبغي له بذل البر في أصحابه وكف أذاه عنهم وأمرهم بالمعروف ونهيهم عن المنكر بالحكمة والموعظة الحسنة على حسب الطاقة

يجب على المسلم أن يترك الرفث والفسوق والجدال لقول الله تعالى: {الْحَجُّ أَشْهُرٌ مَّعْلُومَاتٌ فَمَن فَرَضَ فِيهِنَّ الْحَجَّ فَلاَ رَفَثَ وَلاَ فُسُوقَ وَلاَ جِدَالَ فِي الْحَجِّ وَمَا تَفْعَلُواْ مِنْ خَيْرٍ يَعْلَمْهُ اللّهُ وَتَزَوَّدُواْ فَإِنَّ خَيْرَ الزَّادِ التَّقْوَى وَاتَّقُونِ يَا أُوْلِي الأَلْبَابِ}، وصح عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال : “من حج فلم يرفث ولم يفسق رجع كيوم ولدته أمه والرفث يطلق على الجماع وعلى الفحش من القول والفعل ، والفسوق : المعاصي والجدال : المخاصمة في الباطل أو فيما لا فائدة فيه . فأما الجدال بالتي هي أحسن لإظهار الحق ورد الباطل فلا بأس به بل هو مأمور به لقوله تعالى :{ادْعُ إِلِى سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَن ضَلَّ عَن سَبِيلِهِ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ} (125) سورة النحل

 

والمواقيت خمسة

الأول: ذو الحليفة وهو ميقات أهل المدينة وهو المسمى عند الناس اليوم أبيار علي

الثاني: الجحفة وهو ميقات أهل الشام وهي قرية خراب تلي رابغ والناس اليوم يحرمون من رابغ ومن أحرم من رابغ فقد أحرم من الميقات لأن رابغ قبلها بيسير

الثالث: قرن المنازل وهو ميقات أهل نجد وهو المسمى اليوم السيل

الرابع: يلملم وهو ميقات أهل اليمن

الخامس: ذات عرق وهي ميقات أهل العراق

وهذه المواقيت قد وقتها النبي صلى الله عليه وسلم لمن ذكرنا ومن مر عليها من غيرهم ممن أراد الحج أو العمرة والواجب على من مر عليها أن يحرم منها ويَحْرُمُ عليه أن يتجاوزها بدون إحرام إذا كان قاصداً مكة يريد حجاً أو عمرة سواء كان مروره عليها من طريق الأرض أو من طريق الجو لعموم قول النبي صلى الله عليه وسلم لما وقت هذه المواقيت: هن لهن ولمن أتى عليهن من غير أهلهن ممن أراد الحج والعمرة”

والمشروع لمن توجه إلى مكة من طريق الجو بقصد الحج أو العمرة أن يتأهب لذلك بالغسل ونحوه قبل الركوب في الطائرة ، فإذا دنا من الميقات لبس إزاره ورداءه ثم لبى وإن لبس إزاره ورداءه قبل الركوب أو قبل الدنو من الميقات فلا بأس. وأما من كان مسكنه دون المواقيت كسكان جدة وأم السلم وبحرة والشرائع وبدر ومستورة وأشباهها فليس عليه أن يذهب إلى شئ من المواقيت الخمسة المتقدمة بل مسكنه هو ميقاته فيحرم منه بما أراد من حج أو عمرة. وإذا كان له مسكن آخر خارج الميقات فهو بالخيار إن شاء أحرم من الميقات وإن شاء أحرم من مسكنه الذي هو أقرب من الميقات إلى مكة لعموم قول النبي صلى الله عليه وسلم في حديث ابن عباس لما ذكر المواقيت قال “ومن كان دون ذلك فَمُهَلُّهُ من أهله حتى أهل مكة يهلون من مكة”. لكن من أراد العمرة وهو في الحرم فعليه أن يخرج إلى الحل ويحرم بالعمرة منه لأن النبي صلى الله عليه وسلم لما طلبت منه عائشة رضي الله عنها العمرة أمر أخاها عبد الرحمن بأن يذهب بها إلى الحل فتحرم منه

لا يجوز للمحرم بعد نية الإحرام سواء كان ذكراً أو أنثى أن يأخذ من شعره أو أظفاره أو يتطيب

لا يجوز للذكر خاصة أن يلبس مخيطاً على جملته يعنى على هيئته التي فُصِّلَ وخِيطَ عليها كالقميص أو على بعضه كالفانلة والسراويل والخفين والجوربين

لا يجوز للمحرم لبس شيء من الثياب مسه الزعفران أو الورس لأن النبي صلى الله عليه وسلم نهى عن ذلك في حديث ابن عمر رضي الله عنهما

يحرم على المحرم الذكر تغطية رأسه بملاصق كالطاقية والغترة والعمامة أو نحو ذلك. وهكذا وجهه لقول النبي صلى الله عليه وسلم في الذي سقط عن راحلته يوم عرفه ومات “اغسلوه بماء وسدر وكفنوه في ثوبيه ولا تخمروا رأسه ووجهه فإنه يبعث يوم القيام ملبياً”

يحرم على المرأة المحرمة أن تلبس مخيطاً لوجهها كالبرقع والنقاب أو ليديها كالقفازين

يحرم على المسلم محرماً كان أو غير محرم ذكراً كان أو أنثى قتل صيد الحرم والمعاونة في قتله بآلة أو إشارة أو نحو ذلك. ويحرم تنفيره من مكانه ويحرم قطع شجر الحرم ونباته الأخضر ولقطته إلا لمن يعرفها لقول النبي صلى الله عليه وسلم “إن هذه البلد – يعني مكة – حرام بحرمة الله إلى يوم القيامة لا يعضد شجرها ولا ينفر صيدها ولا يختلى خلاها ولا تحل ساقطتها إلا لمنشد” متفق عليه والمنشد هو المعرف والخلا هو الحشيش الرطب ومنى ومزدلفة من الحرم وأما عرفة فمن الحل

يجوز للمحرم لبس الخفاف التي ساقها دون الكعبين لكونها من جنس النعلين

يجوز له عقد الإزار وربطه بخيط ونحوه لعدم الدليل المقتضي للمنع

يجوز للمحرم أن يغتسل ويغسل رأسه ويحكه إذا احتاج إلى ذلك برفق وسهولة فإن سقط من رأسه شئ بسبب ذلك فلا حرج عليه

يجوز للمرأة أن تحرم فيما شاءت من أسود أو أخضر أو غيرهما مع الحذر من التشبه بالرجال في لباسهم وأما تخصيص بعض العامة إحرام المرأة في الأخضر أو الأسود دون غيرهما فلا أصل له

يباح (للمرأة المحرمة) سدل خمارها على وجهها إذا احتاجت إلى ذلك بلا عصابة وإن مس الخمار وجهها فلا شئ عليها لحديث عائشة رضي الله عنها قالت: “كان الركبان يمرون بنا ونحن مع رسول الله صلى الله عليه وسلم محرمات فإذا حاذونا سدلت إحدانا جلبابها من رأسها على وجهها فإذا جاوزونا كشفناه”. كذلك لا بأس أن تغطي يديها بثوبها أو غيره ويجب تغطية وجهها وكفيها إذا كانت بحضرة الرجال الأجانب لأنها عورة

يجوز للمحرم من الرجال والنساء غسل ثيابه التي أحرم فيها من وسخ أو نحوه ويجوز له إبدالها بغيرها

اذا وصل المعتمر الميقات فعل الاتي

استحب له أن يغتسل ويتطيب لما روي أن النبي صلى الله عليه وسلم تجرد من المخيط عند الإحرام واغتسل ولما ثبت في الصحيحين عن عائشة رضي الله عنها قالت: “كنت أُطيّب رسول الله صلى الله عليه وسلم لإحرامه قبل أن يُحرِم ولِحلِّه قبل أن يطوف بالبيت” وأمر عائشة لما حاضت وقد أحرمت بالعمرة أن تغتسل وتحرم بالحج وأمر صلى الله عليه وسلم أسماء بنت عميس لما ولدت بذي الحليفة أن تغتسل وتستثـفر بثوب وتحرم. فدل ذلك على أن المرأة إذا وصلت إلى الميقات وهي حائض أو نفساء أن تغتسل وتحرم مع الناس وتفعل ما يفعله الحاج غير الطواف بالبيت كما أمر النبي صلى الله عليه وسلم عائشة وأسماء بذلك

يستحب لمن أراد الإحرام أن يتعاهد شاربه وأظفاره وعانته وإبطيه فيأخذ ما تدعو الحاجة إلى أخذه لئلا يحتاج إلى أخذ ذلك بعد الإحرام وهو مُحَرَّمٌ عليه. ولأن النبي صلى الله عليه وسلم شرع للمسلمين تعاهد هذه الأشياء في كل وقت كما ثبت في الصحيحين عن أبي هريرة رضي الله عنه قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم “الفطرة خمس الختان والاستحداد وقص الشارب وقلم الأظفار ونتف الآباط” وفي صحيح مسلم عن أنس رضي الله عنه قال وُقِّتَ لنا في قص الشارب وقلم الأظفار ونتف الإبط وحلق العانة أن لا نترك ذلك أكثر من أربعين ليلة وأخرجه النسائي بلفظ: وَقَّتَ لنا رسول الله صلى الله عليه وسلم. وأما الرأس فلا يشرع أخذ شئ منه عند الإحرام لا في حق الرجال ولا في حق النساء. وأما اللحية فيحرم حلقها أو أخذ شئ منها في جميع الأوقات

يلبس الذكر إزاراً ورداءاً ويستحب أن يكونا أبيضين نظيفين ويستحب أن يحرم في نعلين لقول النبي صلى الله عليه وسلم “وليحرم أحدكم في إزار ورداء ونعلين”

وأما المرأة فيجوز لها أن تحرم في ما شاءت من أسود أو أخضر أو غيرها

بعد الفراغ من الغسل والتنظيف ولبس ثياب الإحرام ينوي بقلبه الدخول في النسك الذي يريده من حج أو عمرة لقول النبي صلى الله عليه وسلم “إنما الأعمال بالنيات وإنما لكل امرئ ما نوى” ويشرع له التلفظ بما نوى فإن كانت نيته العمرة قال {لبيك عمرةً} أو {اللهم لبيك عمرةً}، وإن كانت نيته الحج قال {لبيك حجاً} أو اللهم لبيك حجاً

إن خاف المحرم أن لا يتمكن من أداء نسكه لكونه مريضاً أو خائفاً من عدو ونحوه استحب له أن يقول عند إحرامه “فإن حبسني حابس فمحلي حيث حبستني” لحديث ضباعة بنت الزبير رضي الله عنها أنها قالت يا رسول الله إني أريد الحج وأنا شاكية فقال لها النبي صلى الله عليه وسلم “حجي واشترطي أن محلي حيث حبستني”. وفائدة هذا الشرط أن المحرم إذا عرض له ما يمنعه من تمام نسكه من مرض أو صد عدو جاز له التحلل ولا شئ عليه (و) “إذا كان لم يشترط ثم حصل عليه حادث يمنعه من التمام إن أمكنه الصبر لعله يزول أثر الحادث ثم يكمل صبر وإن لم يتمكن من ذلك فهو محصر على الصحيح والله قال في المحصر :{فَإِنْ أُحْصِرْتُمْ فَمَا اسْتَيْسَرَ مِنَ الْهَدْيِ} والصواب أن الإحصار يكون بالعدو ويكون بغير العدو فيهدي ويحلق أو يقصر ويتحلل هذا هو حكم المحصر يذبح ذبيحة في محله الذي أحصر فيه سواء كان في الحرم أو في الحل ويعطيها للفقراء في محله ولو كان خارج الحرم فإن لم يتيسر حوله أحد نقلت إلى فقراء الحرم أو إلى من حوله من الفقراء أو إلى فقراء بعض القرى ثم يحلق أو يقصر ويتحلل فإن لم يستطع الهدي صام عشرة أيام ثم حلق أو قصر وتحلل

الإحرام وهو نية الدخول في النسك لقول الرسول- صلى الله عليه وسلَّم- : ( إنما الأعمال بالنيات وإنما لكل امرىء ما نوى ) ، وله زمان محدد وهي أشهر الحج التي ورد ذكرها في قوله تعالى { الحج أشهر معلومات فمن فرض فيهن الحج فلا رفث ولا فسوق ولا جدال في الحج } (سورة البقرة الآية 197) ، ومكان محدد وهي المواقيت التي يحرم الحاج منها

الوقوف بعرفة لقول النبي – صلى الله عليه وسلم- : ( الحج عرفة ، من جاء ليلة جَمْع قبل طلوع الفجر فقد أدرك ) رواه أبوداود وغيره، والمقصود بجَمْع: المزدلفة، ويبتدئ وقته من زوال شمس يوم التاسع من ذي الحجة ويمتد إلى طلوع فجر يوم النحر ، وقيل يبتدىء من طلوع فجر اليوم التاسع فمن حصل له في هذا الوقت وقوف بعرفة ولو لحظة واحدة فقد أدرك الوقوف

طواف الإفاضة لقوله سبحانه :{ثم ليقضوا تفثهم وليوفوا نذورهم وليطوفوا بالبيت العتيق } والسعي بين الصفا والمروة لقوله- صلى الله عليه وسلم- : اسعوا فإن الله كتب عليكم السعي

وأما واجبات الحج التي يصح بدونها فهي

يكون الإحرام من الميقات المعتبر شرعاً لقوله – صلى الله عليه وسلم- حين وقت المواقيت: ( هن لهن ولمن أتى عليهن من غير أهلهن لمن كان يريد الحج والعمرة ) رواه البخاري

الوقوف بعرفة إلى الغروب لمن وقف نهاراً لأن النبي – صلى الله عليه وسلم- وقف إلى الغروب وقال : لتأخذوا عني مناسككم

المبيت بمزدلفة ليلة النحر واجب عند أكثر أهل العلم لأنه – صلى الله عليه وسلم- بات بها وقال: لتأخذ أمتي نسكها فإني لا أدري لعلي لا ألقاهم بعد عامي هذا

ويجوز الدفع إلى منى في آخر الليل للضعفة من النساء والصبيان ممن يشق عليهم زحام الناس ، وذلك ليرموا الجمرة قبل وصول الناس، قال ابن عباس رضي الله عنهما : ” كنت فيمن قدم النبيُّ – صلى الله عليه وسلم- في ضعفة أهله من مزدلفة إلى منى ” متفق عليه ، وعن عائشة رضي الله عنها قالت: ” أرسل رسول الله – صلى الله عليه وسلم- بأم سلمة ليلة النحر فرمت الجمرة قبل الفجر ثم أفاضت ” رواه أبو داود

رمي الجمار: جمرة العقبة يوم العيد ، والجمرات الثلاث أيام التشريق، لأن هذا هو فعل النبي – صلى الله عليه وسلم- ، ولأن الله تعالى قال: {واذكروا الله في أيام معدودات فمن تعجل في يومين فلا إثم عليه ومن تأخر فلا إثم عليه لمن اتقى } (سورة البقرة الآية 203) ، ورمي الجمار من ذكر الله ، لقوله عليه الصلاة والسلام: ( إنما جُعل الطواف بالبيت، وبالصفا والمروة ، ورمي الجمار لإقامة ذكر الله ) رواه أبوداود وغيره

الحلق والتقصير لأن النبي صلى الله عليه وسلم- أمر به فقال: ( وليقصر وليحلل ) متفق عليه ، ودعا للمحلقين ثلاثا وللمقصرين مرة. طواف الوداع لأمره – صلى الله عليه وسلم- بذلك في قوله: لا ينفرن أحد حتى يكون آخر عهده بالبيت

وما عدا هذه الأركان والواجبات من أعمال الحج فسنن ومستحبات، كالمبيت بمنى، وطواف القدوم، والرمل في الثلاثة الأشواط الأولى، والاضطباع فيه، والاغتسال للإحرام، ولبس إزار ورداء أبيضين نظيفين، والتلبية من حين الإحرام بالحج إلى أن يرمي جمرة العقبة، واستلام الحجر وتقبيله، والإتيان بالأذكار والأدعية المأثورة، وغير ذلك من السنن التي يستحب للحاج أن يفعلها، وأن لا يفرط فيها اقتداء بالنبي – صلى الله عليه وسلم – وإن كان لا يلزمه شيء بتركها

اليوم الأول: يوم الثامن من ذي الحجة

في صباح يوم التروية أي الثامن من ذي الحجة يحرم الحاج المتمتع من جديد ويصلي ركعتي الإحرام ويقول: اللهم إني أريد الحج فيسره لي وتقبله مني، نويت الحج وأحرمت به لله تعالى فإن حبسني حابس فمحلي حيث حبستني.ويقول لبيك اللهم لبيك… ثلاث مرات، ويختم بالصلاة على سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم).وإن أراد الحاج المتمتع أن يقدم سعي الحج على طواف الإفاضة تخفيفاً على نفسه بعد رجوعه من عرفات فعليه أن ينشئ طواف نفل، يضطبع في كل الأشواط ويرمل في الأشواط الثلاثة الأولى ويسعى بعده سعي الحج

الانطلاق إلى مِنى

بعد صلاة الفجر في مكة، يخرج الحجاج كلهم إلى مِنى بعد طلوع الشمس وصلاة الضحى فيمكث بها إلى ما بعد شروق شمس يوم عرفة أي يصلي بمنى خمس صلوات و هي الظهر – العصر – المغرب – العشاء – وفجر اليوم التالي أي يوم التاسع من ذي الحجة، وعند التوجه إلى مِنى يقول:

اللهم إياك أرجو ولك أدعو فبلغني صالح أملي وأغفر لي وأمنن علي بما مننت به على أهل طاعتك، إنك على كل شيء قدير. وفي مِنى يكثر الحاج من الأذكار والقول :ربنا آتنا في الدنيا حسنة وفي الآخرة حسنة وقنا عذاب النار

اليوم الثاني: يوم التاسع من ذي الحجة يوم عرفة

بعد طلوع الشمس في يوم عرفة يتوجه الحاج من مِنى إلى عرفات ويقول في مسيره “اللهم إليك توجهت, ووجهَك الكريمَ أردت فاجعل ذنبي مغفوراً وحجي مبرورا,ً وارحمني إنك على كل شيء قدير

جبل الرحمه

ويكثر الحاج من التلبية وقراءة القرآن ومن قول ربنا آتنا في الدنيا حسنة…..، ويقف في عرفات

وعرفات كلها موقف, ولكن أفضلها موقف رسول الله (صلى الله عليه وسلم) عند الصخرات الكبار في أسفل جبل الرحمة

وإذا وقع بصره على جبل الرحمة يسبح الله ويكبره.

ويحاول جاهداً أن يكون حاضر القلب و يحاول جاهداً البكاء.

ويكثر من الدعاء و التهليل وقراءة القرآن قائماً وقاعداً, ويخفض صوته في الدعاء, ويلح في الدعاء, ويكرره ثلاثاً و يحرص على أن يكون مستقبل الكعبة المشرفة وأن يفتح ويختم دعاءه بالتحميد والتمجيد والتسبيح لله والصلاة على النبي (صلى الله عليه وسلم)

أدعية عرفة

يفضل ما قاله سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم) و النبيُّون من قبله: لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له الملك وله الحمد، يحيي ويميت وهو على كل شيءٍ قدير يستحب الإكثار من هذه الصيغة (مئة مرة على الأقل)

اللهم إني ظلمت نفسي ظلماً كثيرا,ً وإنه لا يغفر الذنوب إلا أنت فاغفر لي مغفرة من عندك وارحمني إنك أنت الغفور الرحيم

ربنا لا تؤاخذنا إن نسينا أو أخطأنا ربنا ولا تحمل علينا إصراً كما حملته على الذين من قبلنا، ربنا ولا تحملنا ما لا طاقة لنا به و اعفُ عنا و اغفر لنا و ارحمنا أنت مولانا فانصرنا على القوم الكافرين

ربنا لا تزغ قلوبنا بعد أن هديتنا وهب لنا من لدنك رحمة إنك أنت الوهاب

ربنا ظلمنا أنفسنا وإن لم تغفر لنا وترحمنا لنكونن من الخاسرين اللهم أنت ربي لا إله إلا أنت, خلقتني وأنا عبدك, وأنا على عهدك و وعدك ما استطعت, أعوذ بك من شر ما صنعت, أبوء لك بنعمتك علي، وأبوء بذنبي فاغفر لي، فإنه لا يغفر الذنوب إلا أنت. (سيد الاستغفار) لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له الملك، وله الحمد، وهو على كل شيء قدير، اللهم لك الحمد كالذي تقول، و خيراً مما نقول، اللهم لك صلاتي ونُسُكِي ومحياي ومماتي، وإليك مآبي، ولك رب تراثي، اللهم إني أعوذ بك من عذاب القبر، و وسوسة الصدر، وشتات الأمر، اللهم إني أعوذ بك من شر ما تجيءُ به الريح

اللهم ربنا آتنا في الدنيا حسنة و في الآخرة حسنة وقنا عذاب النار، اللهم اغفرلي مغفرة من عندك تصلح بها شأني في الدارين وارحمني رحمة منك أسعد بها في الدارين, و تب علي توبة نصوحاً لا أنكثها أبدا,ً وألزمني سبيل الاستقامة لا أزيغ عنها أبداً اللهم انقلني من ذل المعصية إلى عز الطاعة, وأغنني بحلالك عن حرامك, وبطاعتك عن معصيتك, وبفضلك عمن سواك, و نوِّر قلبي و قبري, و أعذني من الشر كله, واجمع لي الخير كله, أستودعك ديني وأمانتي وقلبي وبدني وخواتيم عملي وجميع ما أنعمت به علي وعلى جميع أحبائي والمسلمين أجمعين

الإفاضة من عرفات إلى مزدلفة

إذا غربت شمس يوم عرفة توجه الحاج إلى مزدلفة ملبياً ومكبراً ومهللاً وحامداً ويقول: الله أكبر الله أكبر الله أكبر، لا إله إلا الله والله أكبر، الله أكبر ولله الحمد و يقول: إليك اللهم أرغب, وإياك أرجو, فتقبل نسكي ووفقني, وارزقني فيه من الخير أكثر مما أطلب, ولا تخيبني, إنك أنت الله الجواد الكريم. يسير الحاج إلى مزدلفة على هينته بالسكينة والوقار دون إسراع لئلا يؤذي أحداً. وعندما يصل الحاج إلى مزدلفة يحاول النزول قرب مسجد المشعر الحرام (جبل قزح) إن تيسر. يستحب الإكثار من الدعاء والأذكار والتلبية وقراءة ما تيسر من القرآن

مزدلفة

فَإِذَا أَفَضْتُمْ مِنْ عَرَفَاتٍ فَاذْكُرُوا اللَّهَ عِنْدَ الْمَشْعَرِ الْحَرَامِ وَاذْكُرُوهُ كَمَا هَدَاكُمْ وَإِنْ كُنْتُمْ مِنْ قَبْلِهِ لَمِنَ الضَّالِّين َ* ثُمَّ أَفِيضُوا مِنْ حَيْثُ أَفَاضَ النَّاسُ وَاسْتَغْفِرُوا اللَّهَ إِنَّ اللَّهَ غَفُورٌ رَحِيم

ثم يصلي المغرب والعشاء بعد دخول وقت العشاء جمعاً بآذان واحدوإقامة واحدة ويؤخر سنة المغرب والعشاء والوتر إلى مابعد فرض العشاء. من الدعاء المأثور بمزدلفة: (اللهم إني أسألك فواتح الخير وخواتمه وجوامعه وأوله وآخره وظاهره وباطنه والدرجات العلا في الجنة, وأن تصلح لي شأني كله, وأن تصرف عني الشر كله, فإنه لا يفعل ذلك غيرك, ولا يجود به إلا أنت. ويكثر من الاستغفار، ويبيت بمزدلفة حتى منتصف الليل. ثم يتزود الحاج بالحصيات وعددها 70 حصاة (فوق حجم الحمص و دون البندق) لرمي الجمرات كلها. إذا طلع الفجر يسن أن يصلي الصبح في أول وقتها، ثم يقول: الله أكبر الله أكبر الله أكبر, لا إله إلا الله و الله أكبر, الله أكبر و لله الحمد) ويصلي على سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم) ويدعو رافعاً يديه إلى السماء

يجب الانتباه إلى أن مزدلفة كلها موقف إلا وادي محسر

اليوم الثالث: السير إلى مِنى/ يوم النحر

بعد صلاة الصبح وقبل طلوع الشمس يتوجه الحاج إلى مِنى ويبذل جهده في الإكثار من التلبية، ويستحسن أن يقول في مسيره: اللهم إليك أفضت، ومن عذابك أشفقت، وإليك توجهت، ومنك رهبت، اللهم تقبل نسكي، وأعظم أجري، وارحم تضرعي، واستجب دعوتي ويصلي على النبي (صلى الله عليه وسلم). فإذا بلغ وادي محسر أسرع بقدر رمية حجر ويقول عند وصوله إلى مِنى الحمد لله الذي بلغنيها سالماً معافى، اللهم هذه مِنى قد أتيتها وأنا عبدك، وفي قبضتك، أسألك أن تمن علي بما مننت به على أوليائك، اللهم إني أعوذ بك من الحرمان والمصيبة في ديني، يا أرحم الراحمين

وأعمال مِنى يوم النحر متعددة و هي

رمي جمرة العقبة – الذبح – الحلق – طواف الإفاضة – السعي إذا لم يكن قد سعى من قبل

 جمرة العقبه

رمي جمرة العقبة

يرمي الحاج سبع حصيات ويقول عند كل واحدة: بسم الله، والله أكبر, رغماً للشيطان وحزبه وإرضاءً للرحمن ويقطع الحاج التلبية بأول الرمي

وقت الرمي من فجر يوم النحر إلى فجر اليوم التالي ولكن السنة أن يكون الرمي ما بين طلوع الشمس إلى الزوال ويجوز الرمي بعد الغروب إلى الفجر لكن مع الكراهة إلا لعذر. رمي الجمرة بحيث تضرب الحصية في شاخص (عمود) الجمرة أو تقع في الدائرة المحيطة به, ويكون الحاج واقفاً مستقبل الجمرة بحيث يجعل مِنى عن يمينه وطرق مكة عن يساره, أما الرمي من فوق الجسر فمن أي جهة كانت

ذبح الهدي

وهي واجبة على المتمتع والقارن فقط

الحلق أو التقصير

يجب حلق الشعر أو تقصيره للرجل وتقصيره قدر الأنملة للمراة (2 سم) ويستحب الحلق بشكل كامل وبالموس لحديث رسول الله صلى الله عليه وسلم: عن ابن عمررضي الله عنه أن رسول الله (صلى الله عليه وسلم) قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: والمقصرين. والمرأة تقصر فقط قدر الأنملة.

اليوم الرابع: أول أيام التشريق ، ثاني أيام النحر

في مِنى يرمي الحاج الجمرات الثلاث في هذا اليوم, والسنة أن يبدأ بالجمرة الصغرى, ثم الوسطى, ثم الكبرى (العقبة)، يرمي كل واحدة بسبع حصيات قائلاً مع كل رمية: بسم الله، والله أكبر رغماً للشيطان وحزبه وإرضاءً للرحمن

ويدعو بعد كل جمرة ما عدا جمرة العقبة الكبرى، يرفع يديه مستقبلاً الكعبة ويصلي على النبي (صلى الله عليه وسلم) و يدعو بحاجته ويقول: اللهم اجعله حجاً مبروراً وذنباً مغفوراً وعملاً صالحاً مقبولاً وتجارة لن تبور

ووقت الرمي من زوال الشمس (وقت الظهر) إلى طلوع فجر اليوم التالي ولكن السنة بين الزوال والغروب

جمرة العقبة تٌرمى بحيث يكون الحاج واقفاً مستقبل الجمرة ويجعل مِنى عن يمينه وطريق مكة عن يساره. أما الرمي من فوق الجسر فمن أي جهة كانت

أما بالنسبة للجمرة الصغرى والوسطى فترمى من جميع الجهات

الرمي

اليوم الخامس: ثاني أيام التشريق ، ثالث أيام النحر

يجب على الحاج رمي الجمرات الثلاثة أيضاً كما رمى في اليوم الذي قبله على نفس الترتيب والكيفية و الوقت. ثم ينفر الحجاج المتعجلون إلى مكة

اليوم السادس: ثالث أيام التشريق، رابع أيام النحر

إذا كان الحاج متأخراً في مِنى إلى ما بعد غروب شمس ثالث أيام النحر، فيجب أن يرمي الجمرات الثلاث في اليوم الرابع ووقت الرمي هو من طلوع الشمس إلى غروبها

وَاذْكُرُوا اللَّهَ فِي أَيَّامٍ مَعْدُودَاتٍ فَمَنْ تَعَجَّلَ فِي يَوْمَيْنِ فلا إِثْمَ عَلَيْهِ وَمَنْ تَأَخَّرَ فَلا إِثْمَ عَلَيْهِ لِمَنِ اتَّقَى وَاتَّقُوا اللَّهَ وَاعْلَمُوا أَنَّكُمْ إِلَيْهِ تُحْشَرُون

يكون المحرم حال الطواف متطهراً من الأحداث والأخباث خاضعاً لربه متواضعاً له

إن حاضت المرأة أو نفست بعد إحرامها بالعمرة لم تطف بالبيت ولا بين الصفا والمروة حتى تتطهر ، فإذا تطهرت طافت وسعت وقصرت من رأسها وتمت عمرتها بذلك

لا يشرع الرمل والاضطباع في غير هذا الطواف ولا في السعي ولا للنساء لأن النبي صلى الله عليه وسلم لم يفعل الرمل والاضطباع إلا في طوافه الأول الذي أتى به حين قدم مكة

لا بأس بالطواف من وراء زمزم والمقام ولا سيما عند الزحام والمسجد كله محل للطواف ولو طاف في أروقة المسجد أجزأه ذلك ولكن طوافه قرب الكعبة أفضل إن تيسر ذلك

إن شك في عدد الأشواط بنى على اليقين وهو الأقل فإذا شك هل طاف ثلاثة أشواط أو أربعة جعلها ثلاثة وهكذا يفعل في السعي

مما ينبغي إنكاره على النساء وتحذيرهن منه طوافهن بالزينة والروائح الطيبة وعدم التستر وهن عورة . فيجب عليهن التستر وترك الزينة حال الطواف وغيرها من الحالات التي يختلط فيها النساء مع الرجال لأنهن عورة وفتنة . ووجه المرأة هو أظهر زينتها فلا يجوز لها إبداؤه إلا لمحارمها . لقول الله تعالى {وَلَا يُبْدِينَ زِينَتَهُنَّ إِلَّا لِبُعُولَتِهِنَّ } فلا يجوز لهن كشف الوجه عند تقبيل الحجر الأسود إذا كان يراهن أحد من الرجال وإذا لم يتيسر لهن فسحة لاستلام الحجر وتقبيله فلا يجوز لهن مزاحمة الرجال، بل يطفن من ورائهم وذلك خير لهن وأعظم أجراً من الطواف قرب الكعبة حال مزاحمة الرجال

طواف الإفاضة

بدايه ونهاية الطواف

بعد العودة من منى إلى مكة المكرمة يطوف الحاج سبعة أشواط, ويصلي ركعتي الطواف, ويأتي الملتزم وزمزم, ثم يسعى بين الصفا والمروة إذا لم يكن قد سعى من قبل. بعد طواف الإفاضة يتحلل الحاج التحلل الأكبر أي يحل للحاج بعدها كل شيء. ثم يعود الحاج إلى منى للمبيت فيها من أجل رمي الجمرات الثلاث في الأيام الثلاثة القادمة

السعي بين الصفا و المروة

يصعد إلى الصفا بحيث يرى الكعبة (إذا أمكن) من باب الصفا ويقول حين الصعود” إِنَّ الصَّفَا وَالْمَرْوَةَ مِنْ شَعَائِرِ اللَّهِ فَمَنْ حَجَّ الْبَيْتَ أَوِ اعْتَمَرَ فَلا جُنَاحَ عَلَيْهِ أَنْ يَطَّوَّفَ بِهِمَا وَمَنْ تَطَوَّعَ خَيْرًا فَإِنَّ اللَّهَ شَاكِرٌ عَلِيم

ثم يقول: (الله أكبر الله أكبر، الله أكبر و لله الحمد، الله أكبر على ما هدانا والحمد لله على ما أولانا، لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له الملك وله الحمد يحيي ويميت، بيده الخير، وهو على كل شيء قدير، لا إله إلا الله وحده، صدق وعده، ونصر عبده، وأعز جنده، و هزم الأحزاب و حده، لا إله إلا الله، ولا نعبد إلا إياه مخلصين له الدين ولو كره الكافرون، اللهم إنك قلت: ادعوني استجب لكم, وإنك لا تخلف الميعاد، وإني أسألك كما هديتني للإسلام أن لا تنزعه مني حتى تتوفاني وأنا مسلم) ثلاث مرات. ثم يصلي على سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم) ويقول عند هبوطه من الصفا في كل شوط: اللهم إني أسألك موجبات رحمتك وعزائم مغفرتك والسلامة من كل إثم والغنيمة من كل بر والفوز بالجنة والنجاة من النار. يُسن أن يهرول بين الميلين الأخضرين (للرجل فقط). يدعو بين الميلين الأخضرين: ربنا أتنا في الدنيا حسنة وفي الآخرة حسنة وقنا عذاب النار، رب اغفر وارحم، واعف وتكرم، وتجاوز عما تعلم, إنك أنت الأعز الأكرم، اللهم إني أسألك الهدى والتقى والعفاف والغنى، اللهم اعني على ذكرك وشكرك وحسن عبادتك. ثم يصل إلى المروة فهذا شوط واحد فيتم سبعة أشواط يبدأ أولها بالصفا وينتهي آخرها بالمروة

السعي بين الصفا والمروه

عندما يقف عند المروة يقول: إِنَّ الصَّفَا وَالْمَرْوَةَ مِنْ شَعَائِرِ اللَّهِ ..الخ ويقول نفس الأذكار والدعوات التي قالها عند الصفا، (يلبي الحاج في السعي، لا المعتمر). بعد ختام الشوط السابع من السعي يستحب صلاة ركعتين. ويستحب أن يجمع في السعي بين الأذكار والدعوات وما تيسر من القرآن الكريم

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم الأول

اليوم الأول: يوم الثامن من ذي الحجة

في صباح يوم التروية أي الثامن من ذي الحجة يحرم الحاج المتمتع من جديد ويصلي ركعتي الإحرام ويقول: اللهم إني أريد الحج فيسره لي وتقبله مني، نويت الحج وأحرمت به لله تعالى فإن حبسني حابس فمحلي حيث حبستني.ويقول لبيك اللهم لبيك… ثلاث مرات، ويختم بالصلاة على سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم).وإن أراد الحاج المتمتع أن يقدم سعي الحج على طواف الإفاضة تخفيفاً على نفسه بعد رجوعه من عرفات فعليه أن ينشئ طواف نفل، يضطبع في كل الأشواط ويرمل في الأشواط الثلاثة الأولى ويسعى بعده سعي الحج

الانطلاق إلى مِنى

بعد صلاة الفجر في مكة، يخرج الحجاج كلهم إلى مِنى بعد طلوع الشمس وصلاة الضحى فيمكث بها إلى ما بعد شروق شمس يوم عرفة أي يصلي بمنى خمس صلوات و هي الظهر – العصر – المغرب – العشاء – وفجر اليوم التالي أي يوم التاسع من ذي الحجة، وعند التوجه إلى مِنى يقول:

اللهم إياك أرجو ولك أدعو فبلغني صالح أملي وأغفر لي وأمنن علي بما مننت به على أهل طاعتك، إنك على كل شيء قدير. وفي مِنى يكثر الحاج من الأذكار والقول :ربنا آتنا في الدنيا حسنة وفي الآخرة حسنة وقنا عذاب النار

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم الثاني

اليوم الثاني: يوم التاسع من ذي الحجة

بعد طلوع الشمس في يوم عرفة يتوجه الحاج من مِنى إلى عرفات ويقول في مسيره “اللهم إليك توجهت, ووجهَك الكريمَ أردت فاجعل ذنبي مغفوراً وحجي مبرورا,ً وارحمني إنك على كل شيء قدير

ويكثر الحاج من التلبية وقراءة القرآن ومن قول ربنا آتنا في الدنيا حسنة…..، ويقف في عرفات

وعرفات كلها موقف, ولكن أفضلها موقف رسول الله (صلى الله عليه وسلم) عند الصخرات الكبار في أسفل جبل الرحمة

وإذا وقع بصره على جبل الرحمة يسبح الله ويكبره.

ويحاول جاهداً أن يكون حاضر القلب و يحاول جاهداً البكاء.

ويكثر من الدعاء و التهليل وقراءة القرآن قائماً وقاعداً, ويخفض صوته في الدعاء, ويلح في الدعاء, ويكرره ثلاثاً و يحرص على أن يكون مستقبل الكعبة المشرفة وأن يفتح ويختم دعاءه بالتحميد والتمجيد والتسبيح لله والصلاة على النبي (صلى الله عليه وسلم)

أدعية عرفة

يفضل ما قاله سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم) و النبيُّون من قبله: لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له الملك وله الحمد، يحيي ويميت وهو على كل شيءٍ قدير يستحب الإكثار من هذه الصيغة (مئة مرة على الأقل)

اللهم إني ظلمت نفسي ظلماً كثيرا,ً وإنه لا يغفر الذنوب إلا أنت فاغفر لي مغفرة من عندك وارحمني إنك أنت الغفور الرحيم

ربنا لا تؤاخذنا إن نسينا أو أخطأنا ربنا ولا تحمل علينا إصراً كما حملته على الذين من قبلنا، ربنا ولا تحملنا ما لا طاقة لنا به و اعفُ عنا و اغفر لنا و ارحمنا أنت مولانا فانصرنا على القوم الكافرين

ربنا لا تزغ قلوبنا بعد أن هديتنا وهب لنا من لدنك رحمة إنك أنت الوهاب

ربنا ظلمنا أنفسنا وإن لم تغفر لنا وترحمنا لنكونن من الخاسرين اللهم أنت ربي لا إله إلا أنت, خلقتني وأنا عبدك, وأنا على عهدك و وعدك ما استطعت, أعوذ بك من شر ما صنعت, أبوء لك بنعمتك علي، وأبوء بذنبي فاغفر لي، فإنه لا يغفر الذنوب إلا أنت. (سيد الاستغفار) لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له الملك، وله الحمد، وهو على كل شيء قدير، اللهم لك الحمد كالذي تقول، و خيراً مما نقول، اللهم لك صلاتي ونُسُكِي ومحياي ومماتي، وإليك مآبي، ولك رب تراثي، اللهم إني أعوذ بك من عذاب القبر، و وسوسة الصدر، وشتات الأمر، اللهم إني أعوذ بك من شر ما تجيءُ به الريح

اللهم ربنا آتنا في الدنيا حسنة و في الآخرة حسنة وقنا عذاب النار، اللهم اغفرلي مغفرة من عندك تصلح بها شأني في الدارين وارحمني رحمة منك أسعد بها في الدارين, و تب علي توبة نصوحاً لا أنكثها أبدا,ً وألزمني سبيل الاستقامة لا أزيغ عنها أبداً اللهم انقلني من ذل المعصية إلى عز الطاعة, وأغنني بحلالك عن حرامك, وبطاعتك عن معصيتك, وبفضلك عمن سواك, و نوِّر قلبي و قبري, و أعذني من الشر كله, واجمع لي الخير كله, أستودعك ديني وأمانتي وقلبي وبدني وخواتيم عملي وجميع ما أنعمت به علي وعلى جميع أحبائي والمسلمين أجمعين

الإفاضة من عرفات إلى مزدلفة

إذا غربت شمس يوم عرفة توجه الحاج إلى مزدلفة ملبياً ومكبراً ومهللاً وحامداً ويقول: الله أكبر الله أكبر الله أكبر، لا إله إلا الله والله أكبر، الله أكبر ولله الحمد و يقول: إليك اللهم أرغب, وإياك أرجو, فتقبل نسكي ووفقني, وارزقني فيه من الخير أكثر مما أطلب, ولا تخيبني, إنك أنت الله الجواد الكريم. يسير الحاج إلى مزدلفة على هينته بالسكينة والوقار دون إسراع لئلا يؤذي أحداً. وعندما يصل الحاج إلى مزدلفة يحاول النزول قرب مسجد المشعر الحرام (جبل قزح) إن تيسر. يستحب الإكثار من الدعاء والأذكار والتلبية وقراءة ما تيسر من القرآن

فَإِذَا أَفَضْتُمْ مِنْ عَرَفَاتٍ فَاذْكُرُوا اللَّهَ عِنْدَ الْمَشْعَرِ الْحَرَامِ وَاذْكُرُوهُ كَمَا هَدَاكُمْ وَإِنْ كُنْتُمْ مِنْ قَبْلِهِ لَمِنَ الضَّالِّين َ* ثُمَّ أَفِيضُوا مِنْ حَيْثُ أَفَاضَ النَّاسُ وَاسْتَغْفِرُوا اللَّهَ إِنَّ اللَّهَ غَفُورٌ رَحِيم

ثم يصلي المغرب والعشاء بعد دخول وقت العشاء جمعاً بآذان واحدوإقامة واحدة ويؤخر سنة المغرب والعشاء والوتر إلى مابعد فرض العشاء. من الدعاء المأثور بمزدلفة: (اللهم إني أسألك فواتح الخير وخواتمه وجوامعه وأوله وآخره وظاهره وباطنه والدرجات العلا في الجنة, وأن تصلح لي شأني كله, وأن تصرف عني الشر كله, فإنه لا يفعل ذلك غيرك, ولا يجود به إلا أنت. ويكثر من الاستغفار، ويبيت بمزدلفة حتى منتصف الليل. ثم يتزود الحاج بالحصيات وعددها 70 حصاة (فوق حجم الحمص و دون البندق) لرمي الجمرات كلها. إذا طلع الفجر يسن أن يصلي الصبح في أول وقتها، ثم يقول: الله أكبر الله أكبر الله أكبر, لا إله إلا الله و الله أكبر, الله أكبر و لله الحمد) ويصلي على سيدنا محمد (صلى الله عليه وسلم) ويدعو رافعاً يديه إلى السماء

يجب الانتباه إلى أن مزدلفة كلها موقف إلا وادي محسر

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم الثالث

اليوم الثالث: السير إلى مِنى/ يوم النحر

بعد صلاة الصبح وقبل طلوع الشمس يتوجه الحاج إلى مِنى ويبذل جهده في الإكثار من التلبية، ويستحسن أن يقول في مسيره: اللهم إليك أفضت، ومن عذابك أشفقت، وإليك توجهت، ومنك رهبت، اللهم تقبل نسكي، وأعظم أجري، وارحم تضرعي، واستجب دعوتي ويصلي على النبي (صلى الله عليه وسلم). فإذا بلغ وادي محسر أسرع بقدر رمية حجر ويقول عند وصوله إلى مِنى الحمد لله الذي بلغنيها سالماً معافى، اللهم هذه مِنى قد أتيتها وأنا عبدك، وفي قبضتك، أسألك أن تمن علي بما مننت به على أوليائك، اللهم إني أعوذ بك من الحرمان والمصيبة في ديني، يا أرحم الراحمين

وأعمال مِنى يوم النحر متعددة و هي

رمي جمرة العقبة – الذبح – الحلق – طواف الإفاضة – السعي إذا لم يكن قد سعى من قبل

رمي جمرة العقبة

يرمي الحاج سبع حصيات ويقول عند كل واحدة: بسم الله، والله أكبر, رغماً للشيطان وحزبه وإرضاءً للرحمن ويقطع الحاج التلبية بأول الرمي

وقت الرمي من فجر يوم النحر إلى فجر اليوم التالي ولكن السنة أن يكون الرمي ما بين طلوع الشمس إلى الزوال ويجوز الرمي بعد الغروب إلى الفجر لكن مع الكراهة إلا لعذر. رمي الجمرة بحيث تضرب الحصية في شاخص (عمود) الجمرة أو تقع في الدائرة المحيطة به, ويكون الحاج واقفاً مستقبل الجمرة بحيث يجعل مِنى عن يمينه وطرق مكة عن يساره, أما الرمي من فوق الجسر فمن أي جهة كانت

ذبح الهدي

وهي واجبة على المتمتع والقارن فقط

الحلق أو التقصير

يجب حلق الشعر أو تقصيره للرجل وتقصيره قدر الأنملة للمراة (2 سم) ويستحب الحلق بشكل كامل وبالموس لحديث رسول الله صلى الله عليه وسلم: عن ابن عمررضي الله عنه أن رسول الله (صلى الله عليه وسلم) قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: رحم الله المحلقين. قالوا: والمقصرين يا رسول الله. قال: والمقصرين. والمرأة تقصر فقط قدر الأنملة.

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم الرابع

اليوم الرابع: أول أيام التشريق ، ثاني أيام النحر

في مِنى يرمي الحاج الجمرات الثلاث في هذا اليوم, والسنة أن يبدأ بالجمرة الصغرى, ثم الوسطى, ثم الكبرى (العقبة)، يرمي كل واحدة بسبع حصيات قائلاً مع كل رمية: بسم الله، والله أكبر رغماً للشيطان وحزبه وإرضاءً للرحمن

ويدعو بعد كل جمرة ما عدا جمرة العقبة الكبرى، يرفع يديه مستقبلاً الكعبة ويصلي على النبي (صلى الله عليه وسلم) و يدعو بحاجته ويقول: اللهم اجعله حجاً مبروراً وذنباً مغفوراً وعملاً صالحاً مقبولاً وتجارة لن تبور

ووقت الرمي من زوال الشمس (وقت الظهر) إلى طلوع فجر اليوم التالي ولكن السنة بين الزوال والغروب

جمرة العقبة تٌرمى بحيث يكون الحاج واقفاً مستقبل الجمرة ويجعل مِنى عن يمينه وطريق مكة عن يساره. أما الرمي من فوق الجسر فمن أي جهة كانت

أما بالنسبة للجمرة الصغرى والوسطى فترمى من جميع الجهات

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم الخامس

اليوم الخامس

يجب على الحاج رمي الجمرات الثلاثة أيضاً كما رمى في اليوم الذي قبله على نفس الترتيب والكيفية و الوقت. ثم ينفر الحجاج المتعجلون إلى مكة

The Importance of Hajj | HAJJ GUIDE | Alhadi Travel August 2022

اليوم السادس

اليوم السادس

إذا كان الحاج متأخراً في مِنى إلى ما بعد غروب شمس ثالث أيام النحر، فيجب أن يرمي الجمرات الثلاث في اليوم الرابع ووقت الرمي هو من طلوع الشمس إلى غروبها

وَاذْكُرُوا اللَّهَ فِي أَيَّامٍ مَعْدُودَاتٍ فَمَنْ تَعَجَّلَ فِي يَوْمَيْنِ فلا إِثْمَ عَلَيْهِ وَمَنْ تَأَخَّرَ فَلا إِثْمَ عَلَيْهِ لِمَنِ اتَّقَى وَاتَّقُوا اللَّهَ وَاعْلَمُوا أَنَّكُمْ إِلَيْهِ تُحْشَرُون

Scroll to Top